محشر لکھنوی “بس وہ فشارِ قبر سے محشر بچائے گا جس …

محشر لکھنوی
“بس وہ فشارِ قبر سے محشر بچائے گا
جس نے شگاف ڈال دیا مہتاب دیا
یا رب یہ التماس ہے تیری جناب میں
مجھ کو ملا دے خاکِ بو تراب میں ”
…..
“چھینے گا کون تجھ سے زمانے میں جیتے جی
محشر تیرا قلم ہے امانت حُسین کی
تھی کربلا میں حق کو ضرورت حُسین کی
لگتی وطن میں کیسے ہائے طبعیت حُسین کی”
…..
“خدا کا یہ کرم کیا مجھ پہ کم ہے
علی کا ذکر اور میرا قلم ہے”
…..
“مشکل کے وقت آتا ہے خیبر شکن کا نام
ڈھارس ہے میرے قلب کی شاہِ زمن کا نام
جیسے ازان میں اکبر گُل پیر ہن کا نام
محشر کے دل پہ نقش ہے یوں پنجتن کا نام”
…..
“چھینے گا کون تجھ سے زمانے میں جیتے جی
محشر تیرا قلم ہے امانت حُسین کی
تھی کربلا میں حق کو ضرورت حُسین کی
لگتی وطن میں کیسے ہائے طبعیت حُسین کی”
….
بین الا قوامی شہرت یافتہ شاعر صحافی ،ادیب و مصنف ،خطاط
مصورِ غم غزل نعت منقعبت قوالی نوحہ مرثیہ کے شاعرِ اہلیبت اُستاد
محشر لکھنوی


Leave your vote

0 points
Upvote Downvote

Total votes: 0

Upvotes: 0

Upvotes percentage: 0.000000%

Downvotes: 0

Downvotes percentage: 0.000000%

شئیر کریں
1 تبصرہ
  1. گمنام کہتے ہیں

    محشر تیرا قلم ھے امانت حسین کی سبحان اللہ جناب

جواب چھوڑیں

Hey there!

Forgot password?

Don't have an account? Register

Forgot your password?

Enter your account data and we will send you a link to reset your password.

Your password reset link appears to be invalid or expired.

Close
of

Processing files…