( غیــر مطبــوعـہ ) ناتــوانی بھـــــی نہیـں مـــ…

( غیــر مطبــوعـہ )

ناتــوانی بھـــــی نہیـں مـــانـعِ طُــغــیــانیِ شوق

عَجـــز کے سـائے ذرا دیکھیے سـلطـانیِ شوق

اے جمــــــالِ نظــــــر انداز ! اے بولانیِ شوق !

مجھ سے دیکھی نہیں جـاتی تِری اَرزانیِ شوق

پیــــچ دَر پیــــچ الَجھـتا ہُــوا نظّـــــــارۂ حُســن

یوں کہ ہر پیـــچ سُــلجھتی ہوئی عُریانیِ شوق !

زندگی شـوقِ سفــر میں تھی' سفــر سے آگے

اور ما بعــــــدِ سفــر راہ فـــــــــروزانیِ شوق !

جــا ۔ ۔ مِری مـــوجِ سـخُـن نازِ تمـــوّج بن کر

تُوخلا سے بھی گزر! جانِ غزل خوانیِ شوق !

دلِ صد رنگـــ شکسـتہ ! ذرا تیزی سے بکھر

اَور مَیـں سِہـہ نہیں سکتا یہ پریشــــانیِ شوق

یہ جو صحــرا تجھے سَــرســبز نظر آتا ہے

مِلنے آیا تھـــا یہــاں مجھ سے بیــابانیِ شوق

منحَصــر لمسِ بہـــارِیں پہ گُلِ دل کا نصیب

کوئی بُســــتانیِ غــم ہا ؟ کوئی بارانیِ شوق ؟

آئنہ خــانۂ تنہــــائی کی وَحشت سے ضِیـــاؔ !

عکس دَر عکس اُبھرتی ہوئی حیـرانیِ شوق

( ضِیــاؔ بلـــوچ )

— with Zia Baloch.

جواب چھوڑیں