( فکر کر! ) – [ جرمن نظم کا منظُوم اردُو ترجمہ ] …

( فکر کر! )

– [ جرمن نظم کا منظُوم اردُو ترجمہ ] –

شاعر: اڈولف ہٹلر (1889ء ـ 1945ء)

منظُوم اردُو ترجمہ: ياسر قاضی

جیسے بڑھتی ہے ماں بڑھاپے کو،

اس کی پياری وفا شعار نظر،

زندگی کو نہ دیکھ پاتی ہے

جیسے دیکھا کیے تھی وہ پہلے

روشنی اس کی روز جاتی ہے۔

اس کے پاؤں میں جب تھکن پیہم،

گھر سی کر جائے یُوں بڑھاپے میں

وہ نہ پہلے سے اپنے جسم کا بوجھ،

اپنے پاؤں کے بل اٹھا پائے

یُوں جو ہوجائے تو سہارے کو،

اُس کو بازُو ادھار دے دینا۔

اپنی تم خوشگوار سنگت کے،

پر مسرّت سے سلسلے دينا

کیونکہ وہ لمحہء اذيّت بھی،

ایک دن عين تم پہ آنا ہے،

اُس کے غمناک الوداعی جب،

اُس سفر نے تمہیں رُلانا ہے

تم سے پُوچھے اگر تری ماں کچھ،

پیار سے اس کا تم جواب بهی دو

وہ اگر پھر وہی سوال کرے،

پیار سے پھر اسے وہ بات کہو

تِیسری بار بھی جو دہرائے،

پهر بھی جُھنجھلائے بِن شفيق رہو۔

عين شائستگی سے دہرا دو،

پهر وہی بات، اور خفا مت ہو۔۔۔

وہ کوئی بات گر نہ سمجھے تو،

پیار سے اُس کو بیٹھ سمجھاؤ

ورنہ وہ تلخ وقت آئے گا،

اُس کے لب کچھ نہ بول پائیں گے

اس کا مُنّہ کچھ نہ مانگ پائے گا۔۔۔

(ہٹلر کی ماں ”کلارا ہٹلر“، 1860ء میں پيدا ہو کر 1907ء ميں 47 برس کی عمر میں وفات پا گئیں، جب اڈولف ہٹلر 18 برس کا نوجوان تها۔ ہٹلر نے اپنی ماں کے ياد میں یہ نظم 1942ء میں اُس وقت کہی تھی، جب وہ 53 برس کا تھا، اور اس کی ماں کو گزرے 35 برس گزر چکے تھے۔ ہٹلر کی اس نظم کے علاوہ بھی ايک آدھ اور نظمیں ہیں۔ چند ايک نظميں کہنے کے بَل پر ہم ہٹلر کو ”شاعر“ تو نہیں کہہ سکتے، البتہ تاريخ ہٹلر کی شخصيت کے کئی تاريک پہلُوؤں کی نشاندہی کرنے کے ساتھ ساتھ یہ ضرور لکھتی ہے، کہ ہٹلر جیسے سخت مزاج شخص نے شاعری جيسا کار ہائے لطيف بھی انجام ديا۔)

[ اڈولف ہٹلر کی 75 ويں برسی کے موقع پر ]

( جمعرات، 30 اپريل 2020ء ــ ٦ رمضان المبارک ١٤٤١ھ )

(اصل نظم):

( Denk‘ es )

Wenn deine Mutter alt geworden

Und älter du geworden bist

Wenn ihr, was früher leicht und mühelos

Nunmehr zur Last geworden ist

Wenn ihre lieben, treuen Augen

Nicht mehr, wie einst, ins Leben seh‘n

Wenn ihre müd‘ gewordenen Füsse

Sie nicht mehr tragen woll‘n beim Geh‘n

Dann reiche ihr den Arm zur Stütze

Geleite sie mit froher Lust

Die Stunde kommt, da du sie weinend

Zum letzten Gang begleiten mußt

Und fragt sie dich, so gib‘ ihr Antwort

Und fragt sie wieder, sprich auch du

Und fragt sie nochmals, steh‘ ihr Rede

Nicht ungestüm, in sanfter Ruhe

Und kann sie dich nicht recht verstehen

Erklär‘ ihr alles froh bewegt

Die Stunde kommt, die bitt're Stunde

Da dich ihr Mund nach nichts mehr frägt!

– Adolf Hitler – 1942


بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2751053628458486

جواب چھوڑیں