خماریات عمر خیام ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔ معہ تراجم ۔۔۔۔…

خماریات عمر خیام
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
معہ تراجم
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
رباعی

آمد سحرے ندا از مے خانۂ ما
کائے رندِ خراباتی و دیوانۂ ما
برخیز کہ پر کنیم پیمانہ زمے
زاں پیش کہ پر کنند پیمانۂ ما

ترجمہ
از
آغا شاعر قزلباش

آئی یہ صدا صبح کو مے خانے سے
اے رندِ شراب خوار، دیوانے سے
اٹھ جلد بھر شراب سے ساغر ہم
کم بخت چھلک نہ جائے پیمانے سے
ترجمہ
از
تقی امروہوی

اک صبح ندا آئی یہ مے خانے سے
اے رندِ خرابات، مرے دیوانے
قبل اس کے مےِ ناب سے بھر لے ساغر
پیمانہ تن سے بادۂ جاں چھلکے
ترجمہ
از
عزیز احمد جلیلی
اک صبح ندا آئی یہ مے خانے سے
اے رندِ قدح نوش، مرے دیوانے
آخوب مےِ ناب کے ساغر چھلکائیں
بھر جائے قدح زیست کا اس سے پہلے
ترجمہ
از
واقف مراد آبادی:
ہوئی سحر تو پکارا یہ پیرِ مے خانہ
ارے او مست، کہاں ہے سدا کا دیوانہ
بلانا اس کو کہ جلدی سے اس کا جام بھریں
مبادا موت نہ بھر ڈالے اس کا پیمانہ
ترجمہ
از
میرا جی
آئی ندا یہ صبح سویرے کانوں میں مے خانے سے
کوئی یہ کَہ دے جاکے ذرا یہ بات ترے دیوانے سے
اٹھ جاگ، بس آنکھوں کھول، چل آجا، بھر لیں ہم پیمانے کو
کوئی دم میں چھلک اٹھے گی مدھرا جیون کے پیمانے سے
ترجمہ
از
عدم
کل صبح خرابات سے آئی یہ ندا
اٹھ جاگ، صراحی مےِ خنداں کی اٹھا
کب ٹوٹ کے ہو جاتا ہے ریزہ ریزہ
پیمانہ ہستی کا نہیں کوئی پتا
ترجمہ
از
فٹزجیرلڈ
Dreaming when Dawn's Left Hand was in the Sky
I heard a Voice within the Tavern cry,
"Awake, my Little ones, and fill the Cup
Before Life's Liquor in it's Cup be dry."
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2768507850046397

جواب چھوڑیں