"بچہ دو سال میں بولنا سیکھتا ہے اور انسان ساٹ…

"بچہ دو سال میں بولنا سیکھتا ہے اور انسان ساٹھ سال کے بعد کہیں یہ جان پاتا ہے کہ زبان کیسے بند رکھی جائے .. "

"وہ لفظ جو ابھی تک میری زبان سے نکلا نہیں ہے، میرے نزدیک اُن تمام الفاظ سے زیادہ قیمتی ہے، جو زبان سے نکل چکے ہیں .. "

"صلاحیت آگ کی طرح ہوتی ہے۔ آگ اگر بےوقوف کے ہاتھ لگ جائے تو ارد گرد کی ہر چیز کو جلا کر راکھ کر سکتی ہے۔ یہ ذہانت ہی ہے جو اُسے قابو میں رکھتی ہے .. "

"آنکھ کھلتے ہی بستر سے اُٹھ کر یوں نہ بھاگو، جیسے تمہیں کسی چیز نے ڈنک مار دیا ہو، بلکہ سب سے پہلے اُس خواب کے بارے میں سوچو، جو تم نے دیکھا ہے .. "

"کچھ لوگ منہ کھولتے ہیں ، اِس لیے نہیں کہ اُن کے ذہن کے اُفق پر، منڈلانے والے نادر خیالات کے بادل نے انھیں زبان کھولنے پر مجبور کر دیا ہے، بلکہ محض اس لیے کہ ان کی زبان میں کھجلی ہو رہی ہوتی ہے۔"

"لوگ کہتے ہیں، ہمت والا یہ کبھی نہیں پوچھتا کہ پتھروں کی فصیل کتنی اونچی ہے .. "

بعض فنکار بھی، جن کے پاس اپنی جگہ بنانے کی ہمت ہوتی ہے، نہ استقلال، نہ وقار۔۔ وہ اپنے تخیل کی مفلسی کو شاندار الفاظ اور دلفریب ملمع سازی کے پردوں میں چھپانے کی کوشش کرتے ہیں .. "

" خیال پانی کا وہ دھارا ہے۔۔۔۔ جو جھلستی ہوئی زمین کو رطوبت اور نمی فراہم کرتا ہے .. "

"اُس نے ٹالسٹائی جیسی ہیٹ تو خرید لی ہے، مگر وہ اُس جیسا سر کہاں سے لائے گا .. ؟؟ "

رسول حمزہ توف کی کتاب "میرا داغستان" سے چند اقتباسات ..

بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2769853223245193

جواب چھوڑیں