( غیــر مطبـوعـہ ) اِس دل کــــــــــو مـــــلال …

( غیــر مطبـوعـہ )

اِس دل کــــــــــو مـــــلال بے سبب تھا
وہ میـــــــــــرے لئـــــے بنا ہی کب تھا

مَیں تھی کہ بکھـــــرتی شــــــام کی لو
وہ تھـــــــــا کہ طلــــــوع مــاہ شب تھا

خوش بُو سے بھری ہوئی تھیں شامیں
کچھ دن وہ مِـرے قـــــــــریب جب تھا

جیسے کہ کِھلے ہوں دشت میں پھـول
اس شخــــص کو ســــوچنا عجب تھا

روشـن تھـــــــــــا لبــوں پہ نام اُس کا
وہ میری دعــــــــــاے نیـــــم شب تھا

پھر عُمـــــــــر کٹی بغیــــــر اُس کے
اک لمحہ بھی جس کےبِن غضب تھا

اونچی تھیں جہـاں کی ساری رسمیں
بس ' عشـــــق ' ہی ایک کم نسب تھا

( صــائمـہ ؔ زیـۤــدی )

— with Saima Zaidi.

جواب چھوڑیں