میں نہیں تھا / Ben değildim شاعر : Özdemir Asaf (…

میں نہیں تھا / Ben değildim
شاعر : Özdemir Asaf ( ترکی )
مترجم : فرحت آریز

ایک شامگاہ تم اپنی کھڑکی سے باہر دیکھ رہی تھی
آہستہ آہستہ رہ رواں تاریکی کو
میرے جیسا کوئی شخص تمہارے گھر کے سامنے سے گزرا تھا
تمہارا دل تیزی سے دھڑکنے لگا تھا
وہ گزرنے والا میں تو نہیں تھا۔۔۔۔

ایک رات، تم اپنے بستر پر سو رہی تھی
تم اچانک سے اٹھی، عالمِ سکوت میں
ایک خوابچہ تھا جس نے تمہاری نیند اڑا دی تھی
اور تمہارا کمرا اندھیرے سے بھرا ہوا تھا
وہ میں تو نہیں تھا جس کو تم نے دیکھا تھا۔۔۔۔

تب جب میں بہت دور تھا،
بے سبب ہی تمہاری آنکھوں سے آنسوں ریزاں تھے
کیوں کہ تم مجھے سوچنے لگی تھی
تم نے خود کو خیالِ عشق میں چھوڑ دیا تھا
وہ میں نہیں تھا جو یہ سب جانتا تھا۔۔۔

تم اپنے خیالوں میں کھوئی ہوئی، کوئی کتاب پڑھ رہی تھی
جہاں لوگ یا تو محبت میں مبتلا ہو رہے تھے یا مر رہے تھے
کسی نوجواں کو قتل کردیا گیا تھا اس کتاب میں
تم ڈر گئی تھی، تم بہت رونے لگ گئی تھی۔۔
وہ میں تو نہیں تھا جو مر گیا تھا۔۔۔۔
***

متن:
Ben değildim

Bir aksam-üstü pencerenden bakıyordun
Ağır ağır, yollara inen karanlığa
Bana benzeyen biri geçti evinin önünden
Kalbin başladı hızlı hızlı çarpmaya
O geçen ben değildim.

Bir gece, yatağında uyuyordun..
Uyanıverdin birden, sessiz dünyaya
Bir rüyanın parçasıydı gözlerini açan,
Ve karanlıklar içindeydi odan…
Seni gören ben değildim.

Ben çok uzaktaydım o zaman,
Gözlerin kavuştu ağlamaya, sebebsiz ağlamaya.
Artık beni düşünmeye başladığından Bıraktın kendini aşk içinde yaşamaya..
Bunu bilen ben değildim.

Bir kitap okuyordun dalgın..
İçinde insanlar seviyor, ya da ölüyorlardı.
Genç bir adamı öldürdüler romanda.
Korktun, bütün yininle ağlamaya başladın..
O ölen ben değildim..

Özdemir Asaf


بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2771029953127520

جواب چھوڑیں