نظر نظر بے قرار سی ہے، نفس نفس میں شرار سا ہے میں…

نظر نظر بے قرار سی ہے، نفس نفس میں شرار سا ہے
میں جانتا ہوں کہ تم نہ آؤ گے پهر بهی کچھ انتظار سا ہے

مرے عزیزو ! مرے رفیقو ! چلو کوئی داستان چهیڑو
غمِ زمانہ کی بات چهوڑو، یہ غم تو اب سازگار سا ہے

وہی فسردہ سا رنگِ محفل، وہی ترا ایک عام جلوہ
مری نگاہوں میں بار سا تها، مری نگاہوں میں بار سا ہے

کبهی تو آؤ،کبهی تو بیٹهو،کبهی تو دیکهو کبهی تو پوچھو
تمہاری بستی میں ہم فقیروں کا حال کیوں سوگوار سا ہے

چلو کہ جشنِ بہار دیکھیں ، چلو کہ ظرفِ بہار جانچیں
چمن چمن روشنی ہوئی ہے، کلی کلی پر نکھار سا ہے

یہ زلف بردوش کون آیا،یہ کس کی آہٹ سے گل کِهلے ہیں
مہک رہی ہے فضائے ہستی ، تمام عالم بہار سا ہے

(ساغر صدیقی)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

جواب چھوڑیں