نہیں معلوم کیوں آخر دمِ دیدار رقصاں ہوںمگر ہے ناز…

نہیں معلوم کیوں آخر دمِ دیدار رقصاں ہوں
مگر ہے ناز ہر صورت بہ پیشِ یار رقصاں ہوں
تو ہو نغمہ سرا ہر دم میں ہر اک بار رقصاں ہوں
تری خاطر میں ہر اک طرز پر اے یار رقصاں ہوں
تو وہ قاتل کہ جو بہر تماشا خون کرتا ہے
میں وہ بسمل کہ زیرِ خنجرِ خوں خوار رقصاں ہوں
مری جاں آتماشا دیکھ جانبازوں کے مجمعے میں
ردا رسوائی کی اوڑھے سرِ بازار رقصاں ہوں
اگرچہ قطرۂ شبنم نہیں رکتا ہے کانٹے پر
میں وہ قطرہ ہوں شبنم کا بہ نوکِ خار رقصاں ہوں
میں ہوں عثمان مروندی کہ ہے منصور سے یاری
ملامت خلق کرلے میں تو سوئے دار رقصاں ہوں
شاعر : حضرت عثمان مروندی (المعروف لال شھباز قلندر)
مترجم: ڈاکٹر فاطمہ حسن (کراچی)
اصل فارسی متن:
نمی دانم کہ آخر چوں دمِ دیدار می رقصم
مگر نازم کہ ہر صورت بہ پیشِ یار می رقصم
تو ہر دم می سرائی نغمہ و ہر بار می رقصم
بہ ہر طرزِ کہ می رقصا نیم اے یار می رقصم
تو آں قاتل کہ از بہر تماشا خون می ریزی
من آں بسمل کہ زیرِ خنجرِ خوں خوار می رقصم
بیا جاناں تماشا کن کہ در انبوہ جانبازاں
بہ ایں دستارِ رسوائی سرِ بازار می رقصم
اگرچہ قطرۂ شبنم نہ پوید برسرِ خارے
منم آں قطرۂ شبنم بہ نوک خارِ می رقصم
منم عثمان مروندی کہ یارے شیخ منصورم
ملامت می کند خلقے و من بردار می رقصم
حضرت عثمان مروندی (المعروف لال شھباز قلندر)
نوٹ: یہ ترجمہ ڈاکٹر فاطمہ حسن کے چوتھے شعری مجموعے "فاصلوں سے ماورا" میں شامل ہے۔ یہ مجموعہ 2019ء میں پہلی بار شائع ہوا۔

— with Fatema Hassan.

بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2776401895923659

جواب چھوڑیں