( غیــر مطبـوعـہ ) بہت پیاســــــــــا ہے پیــڑ ا…

( غیــر مطبـوعـہ )

بہت پیاســــــــــا ہے پیــڑ اور پا برہنہ چل رہا ہے

سفـــــر کیا ختم ہو، ہم راہ صحــــــــرا چل رہا ہے!

کــوئی نا دیــدہ کشـــــتی رینگتی رہتی ہے دل میں

یہ مجھ سُوکھے کنویں میں کیسا دریا چل رہا ہے؟

اب اِس انبـــــــــوہ میں کیا راستا دے پاؤں تجھ کو

نہ جانے اِس گھڑی سینے میں کیا کیا چل رہا ہے!

مَیں اپنے آپ کا مقــــــروض ہوتا جـــــــۤـا رہا ہوں

اگــــرچہ دیکھنے میں گھــــر تو اچھّا چل رہا ہے

اُداســــــی میرا بازو پکڑے بیٹھی ہے مِرے ساتھ

بھرے میلے میں اک ویـران جُھـــــولا چل رہا ہے

عجب خواہش ہے پھر تعمیر ہو جانے کی خواہش

کہ اس کے پیـچھے پیـچھے میرا ملبہ چل رہا ہے

ذرا سـا ہجـــــــــــر کا پتّھر لــــــگا تو آ گئے سب

ہٹو، جاؤ ! یہـــــــاں کوئی تمــــاشـــا چل رہا ہے؟

یہ کیسا مــــوڑ آ پہنچـــــــا ہے تیری رہ گذر میں

مَیں تھک کے گِر پڑا ہوں، میرا سایہ چل رہا ہے

( سعیــــد شـــــارِق ؔ )

— with ‎سعید شارق‎.

جواب چھوڑیں