کشمیر۔۔اُصیب شاہ | مکالمہ


اٹھائی تھی آواز مگر دبا دی گئی
اس قوم کی بیٹی زندہ دفنا دی گئی
انصاف کے ترازو سے ہٹا کر ہمیں
نہ جانے کس غلطی کی ہے سزا دی گئی
دکھ درد، مصیبت و تکلیف کیا ہمارے ہیں سبھی
آخر کس گناہ کے بدلے ہمیں ان کی بددعا دی گئی
کشمیر بنے گا وطنِ پاک کا دل
ہر پاکستانی کے دل سے ہے یہ صدا دی گئی
انشاءاللہ ( آمین)





بشکریہ

جواب چھوڑیں