جوں جوں میری عمر بڑھی شاعر: لینگسٹن ہیوز (امریکا)م…

جوں جوں میری عمر بڑھی

شاعر: لینگسٹن ہیوز (امریکا)
مترجم: ،رومانیہ نور
طویل عرصے کی بات ہے یہ
اب مجھ کو اپنا سپنا بھول گیا ہے
مگر تب یہ میرے پیشِ نظر تھا
سورج جیسا روشن میراسپنا
اور پھر اک دیوار اٹھی
رفتہ رفتہ بڑھتی گئی
میرے اور سپنے کے بیچ آ کھڑی ہوئی
بلندی اس کی فلک سے جا ٹکرائی
ایک دیوار
ایک پرچھائی
میں ایک سیاہ فام ہوں
سائے میں زمین پر پڑا ہوں
میرے خواب کی لو میرے سامنے نہیں
میرے اوپر موٹی دیوار اور
اس کا سایہ ہے چھایا
میرے ہاتھو!
میرے سیاہ ہاتھو!
اس دیوار کو توڑ ڈالو
کوئی رستہ نکالو
میرا سپنا ڈھونڈ لاؤ
میری مدد کرو
اس سیاہیِ شب کو اجالنے میں
اس سایۂ ظلمت کو
نورِ خورشید ہزارہا ڈھالنے میں
سورج کے ہزاروں شوریدہ خواب پالنے میں۔
As I Grew Old
by Langston Hughes
It was a long time ago.
I have almost forgotten my dream.
But it was there then,
In front of me,
Bright like a sun–
My dream.
And then the wall rose,
Rose slowly,
Slowly,
Between me and my dream.
Rose until it touched the sky–
The wall.
Shadow.
I am black.
I lie down in the shadow.
No longer the light of my dream before me,
Above me.
Only the thick wall.
Only the shadow.
My hands!
My dark hands!
Break through the wall!
Find my dream!
Help me to shatter this darkness,
To smash this night,
To break this shadow
Into a thousand lights of sun,
Into a thousand whirling dreams
Of sun!

— with Romania Noor.

بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2800498540180661

جواب چھوڑیں