شام آئی تو کوئی خوش بدنی یاد آئی مجھے اک شخص ک…

شام آئی تو کوئی خوش بدنی یاد آئی
مجھے اک شخص کی وعدہ شکنی یاد آئی

مجھے یاد آیا کہ وہ دَور تھا سرگوشی کا
آج اُسی دَور کی اک کم سخنی یاد آئی

مسندِ نغمہ سے اک رنگِ تبسم ابھرا
کھلکھلاتی ہوئی غنچہ ندہنی یاد آئی

لب جو یاد آئے تو بوسوں کی خلِش جاگ اُٹھی
پھول مہکے تو مجھے بے چمنی یاد آئی

پھر تصور میں چلی آئی مہکتی ہوئی شب
اور سمٹی ہوئی بے پیرہنی یاد آئی

ہاں کبھی دل سے گزرتا تھا جلوسِ خواہش
آج اُسی طرح کی اک نعرہ زَنی یاد آئی

قصۂ رفتہ کو دہرا تو لیا عزمؔ مگر
کس مسافت پہ تمہیں بے وطنی یاد آئی

(عزمؔ بہزاد)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

جواب چھوڑیں