عشق سے کچھ کام نے کچھ کوئے جاناں سے غرض گل سے مطل…

عشق سے کچھ کام نے کچھ کوئے جاناں سے غرض
گل سے مطلب ہے نہ کچھ خار بیاباں سے غرض

عشق کی سرکار کو بے باک بالکل کر چکے
اب نہ کچھ زنجیر سے مطلب نہ زنداں سے غرض

کس سے ہم جھگڑیں نہیں اپنا کسی ملت میں میل
عشق کے بندے کو کیا گبر و مسلماں سے غرض

عالم وحشت میں عریانی کا جامہ چاہئے
کام ہاتھوں کو گریباں سے نہ داماں سے غرض
.
نواب واجد علی شاہ اخترؔ لکھنوی


جواب چھوڑیں