”گندے کپڑے | Dirty Laundry“ ازقلم ’Paulo Coelho‘…

”گندے کپڑے | Dirty Laundry“ 👘👚💦💥
ازقلم ’Paulo Coelho‘ | مترجم #مُسافرشب`

ایک نیا شادی شدہ نوجوان جوڑا نِیلے سمندر کے کنارے ایک خوبصورت محلہ میں آباد ہو گیا۔ پہلی شام کھڑکی سے باہر انہوں نے دیکھا کہ نِیلا سمندر شدید کندن رنگ ہو گیا ہے۔ غروبِ آفتاب کے ہوشربا منظر کے سامنے دونوں چائے پیتے ہوئے اپنی قسمت پر رشک کرنے لگے۔

شب تک دونوں نے گھر کو رہنے قابل بنا دیا۔ کھڑکی کے قریب میز اور دو کرسیاں رکھ دِیں۔ شمع افروز کھانا کھایا اور سیاہ سمندر کی آواز سُنتے ہوئے اُنہیں نیند آ گئی۔

اگلی صبح کھڑکی کے قریب ناشتہ کرتے ہوئے لڑکی نے دیکھا کہ ایک ہمسائی اپنی زنگ آلود قِسم کی دیوار پر پِھیکے رنگوں والے کپڑے پھیلا رہی ہے۔

لڑکی نے شوہر سے کہا ”ہمسائی کو کپڑے دھونے نہیں آتے۔ یا پھر اُس کا صابون غیرمیعاری ہو گا۔ دیکھو کتنے گندے لگ رہے ہیں۔ یقیناً اُن کپڑوں سے بُو بھی آتی ہو گی۔“

شوہر نے ذرا سا اُٹھ کر ہمسائی اور پھیلے ہوئے کپڑوں کی جانب دیکھا اور واپس بیٹھ کر خاموشی سے ناشتہ کرتا رہا۔

لڑکی نے کہا ”کل تو پتا نہیں چلا تھا مگر سمندر کا رنگ اُتنا بھی نِیلا نہیں جیسا مشہور ہے۔“

اُس دن کے بعد جب بھی ہمسائی کپڑے دھو کر پھیلاتی، لڑکی یہی اعتراضات شروع کر دیتی۔

ایک دن تو اُس نے یہ بھی کہہ دیا کہ ”مجھے خود جا کر اُسے سکھانا پڑے گا کہ کپڑے کیسے دھوتے ہیں۔ اُسے شاید اندازہ نہیں کہ اُس کے گندے مندے کپڑوں کی وجہ سے ہمارا منظر کتنا خراب ہو جاتا ہے۔ کاش ہم میکنوز کی بجائے جزیرہ سینٹورینی میں آباد ہو جاتے تو سمندر بھی زیادہ خوبصورت ملتا۔“

کچھ دن مزید گزر گئے۔ ایک دن وہ صبح اُٹھی اور ناشتہ تیار کر کے کھڑکی کے قریب میز پر لگا دیا۔ آج کچھ تبدیلی محسوس ہو رہی تھی۔ وہ سمندر جس کے خواب وہ جزیرہ سینٹورینی میں دیکھتی رہی تھی، آج وہی نِیلا سمندر اِسی کھڑکی میں سے نظر آ رہا تھا۔ کچھ دیر میں صاف ستھری ہمسائی اپنی چھت پر آئی اور نہایت صاف شفاف کپڑے دیوار پر پھیلا دیے۔ آج اُسے تمام منظر پہلی بار بہت خوبصورت لگ رہا تھا۔

لڑکی نے شوہر سے کہا ”کیا خوبصورت دِن ہے، واہ۔ اور یہ دیکھو آخرکار اِس ہمسائی نے کپڑے دھونا سیکھ لیے ہیں۔ جانے اُسے کِس نے سکھایا۔ چلو اچھا ہوا۔“

شوہر نے نِیلے سمندر کو دیکھتے ہوئے چائے کی طویل چسکی لی اور اس کے بعد اپنی بیوی کو دیکھا اور کہا ”آج مَیں صبح جلدی اُٹھ گیا تھا۔ سوچا کہ ہم نے کبھی اپنی کھڑکی صاف ہی نہیں کی تھی۔ بس آج اندر اور باہر سے خوب صاف کی ہے۔“

لڑکی نے شوہر کی بات سُنی اور خاموشی سے دوبارہ باہر ستھری نکھری ہمسائی اور نِیلے سمندر کو دیکھنے لگی۔

کھڑکی اُس کی اپنی دھول زدہ تھی مگر اُسے ہمسائی، اُس کے دھوئے ہوئے کپڑوں اور سمندر میں کمیاں نظر آ رہی تھیں۔ زندگی کا بھی یہی معاملہ ہے۔ جو کمیاں خود ہم میں ہوتی ہیں، وہی دوسروں میں نظر آتی ہیں۔ ہمارے قلب و ذہن جیسے ہوں گے، ویسا منظر دکھائی دے گا۔

لہذا، دوسروں کے متعلق فیصلے کرنے میں جلد بازی نہ کرنا خصوصاً جبکہ تُم غصہ، حسد، منفی میلان یا حسرت میں ہو۔ یہی وہ دھول ہے جو دنیا کے متعلق تمہیں دھوکوں میں رکھتی ہے۔

ہاں، ایک دھول شدید محبت بھی ہوتی ہے مگر ایسی دھندلاہٹ میں محبوب اصل سے زیادہ خوبصورت اور الوہی نظر آتا ہے۔ اگر قلب و ذہن کا آئنہ شفاف نہیں کرنا تو پھر کم از کم یہی دھول اپنا لو۔ محبت کی وجہ سے کسی کو ضرورت سے زیادہ برتر سمجھنا بہتر ہے بجائے کہ حسد یا خودپسندی میں آ کر کسی کو کم تر سمجھا جائے۔

کسی کے متعلق کچھ بھی رائے رکھنے کا مطلب یہ نہیں کہ وہ ایسا ہے، اس کا مطلب صرف اتنا ہے کہ تُم خود کیسے ہو۔ صبح بخیر!!…

#PauloCoelho #Window #Dirty #Laundry #Santorini #مسافرِشَب ★★


بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2810336945863487

جواب چھوڑیں