پنڈت رتن پنڈوروی کی پیدائش July 07, 1907 قلمی نا…

پنڈت رتن پنڈوروی کی پیدائش
July 07, 1907
قلمی نام : رتن پنڈوروی
نام : پنڈت دلا رام
پٹھانکوٹ (پنجاب) , بھارت
پیدائش
1904-07-07 پنڈوری،بٹالہ – بھارت
وفات
1990-11-04 پٹھا ن کوٹ (پنجاب) – بھارت
………
ہوا جاتا ہے فاش اب راز کاوش ہائے پنہانی
مجھے کھینچے لئے جاتی ہے وحشت خارزاروں میں

کہاں تک اے دل مضطر یہ شغل گریہ پیہم
جگر پارے بہے جاتے ہیں خونیں آبشاروں میں

نشان سر بلندی اے رتن پستی میں ملتا ہے
بسر کرتا ہوں اپنی زندگی میں خاکساروں میں
…………..
پہنچے نہ جو مراد کو وہ مدعا ہوں میں
ناکامیوں کی راہ میں خود کھو گیا ہوں میں

کہتے ہیں جس کو حسن اسی کا ہے نام عشق
دیکھو مجھے بغور کہ شان خدا ہوں میں

پردہ اٹھا کہ ہوش کی دنیا بدل گئی
حیران ہوں کہ سامنے کیا دیکھتا ہوں میں

پیوند خاک ہو کے ملیں سر بلندیاں
دشت جنوں میں بن کے بگولا اڑا ہوں میں

واعظ کے پند و وعظ کا اتنا اثر تو ہے
جو کچھ بھی آج اس نے کہا پی گیا ہوں میں

سمجھے مری حقیقت ہستی کوئی رتنؔ
عین فنا کی شکل میں عین بقا ہوں میں
……
غم کی بستی عجیب بستی ہے
موت مہنگی ہے جان سستی ہے

میں اسے کیوں ادھر ادھر ڈھونڈوں
میری ہستی ہی اس کی ہستی ہے

عالم‌ شوق ہے عجب عالم
آسماں پر زمین بستی ہے

جان دے کر جو زندگی پائی
میں سمجھتا ہوں پھر بھی سستی ہے

غم ہے کھانے کو اشک پینے کو
عشق میں کیا فراغ دستی ہے

خاک ساری کی شان کیا کہئے
کس قدر اوج پر یہ پستی ہے

چاک دامان زندگی ہے رتنؔ
یہ جنوں کی دراز دستی ہے


جواب چھوڑیں