طالبؔ مولانا سید ابو الاعلٰی مودودی 1979-1903 غ…

طالبؔ
مولانا سید ابو الاعلٰی مودودی
1979-1903
غزل
دنیا نے سدا سمجھا دیوانہ کو فرزانہ
فرزانہ حقیقت میں ، تھا سب میں جو دیوانہ
اربابِ محبت کا ڈھنگ سب سے نرالا ہے
ایک آن میں دیوانہ اک آن میں فرزانہ
اک قطرہ سے عالم میں طوفان بپا کردے
اک جرعہ سے پیدا کر میخانہ کا میخانہ
تو عالمِ ہستی میں جویای سکوں کیوں ہے
اک شورشِ پیہم ہو ، اے ہمتِ مردانہ
رندوں کا پلا ساقی صہباۓ جنوں پرور
ہو میکدہ برہم کن ، ہر لغزشِ مستانہ
آتش ہے نہاں تجھ میں پھر شمع کی کیا حاجت
خود شعلۂ تاباں بن ، اے سوزشِ پروانہ
ہم نقد کے طالب ہیں تیسے کے نہیں قائل
کیوں ہم کو سناتا ہے ، جنت کا یہ افسانہ
ساقی کے تغافل سے مایوس نہ ہو رندو
خود طالبِ گردش ہے اب فطرتِ پیمانہ
ہر بت کی تجلی میں تو خود ہی درخشاں ہے
تو اپنا پجاری ہے اے صانعِ بت خانہ
کامِ دل و جاں پانا دشوار سہی طالبؔ
ممکن ہے اگر تجھ میں ہو جرآتِ رندانہ
( نقل از ماہنامہ ھومیو پیتھی راولپنڈی فبروری 1992ء )
مولانا کے نانا قربان علی بیگ سالکؔ کا شمار غالب کے خاص شاگردوں میں ہوتا تھا ان کا یہ شعر بہت مشہور ہے
تنگ دستی اگر نہ ہو سالکؔ
تندرستی ہزار نعمت ہے
مولانا نے بھی شاعری کی لیکن مجھے ان کا کلام نہیں مل سکا ہے ۔ یہ غزل دوسری غزل ہے جو میری نظر سے گزری ہے اور یہ مجھے رسالہ دانش سفارتخانہ ایران اسلام آباد کے شمارہ 29 – 30 میں ملی ہے ۔
پہلی غزل شاید 1932ء کی ہے ۔ جو علامہ ابوالاعلٰی مودودی حیات و خدمات ڈاکٹرابوذر اصلاحی میں شامل ہے
غزل
فطرت کی کان سنگ کا حاصل نہیں ہوں میں
پگھلوں نہ غم سے کیوں کہ ترا دل نہیں ہوں میں
دل میں جو ہے خیال لگا ہے وہ جاں کے ساتھ
ہر فکرِ نورسیدہ کی منزل نہیں ہوں میں
یہ عزم ہے کہ میں رخِ دریا کو پھیر دوں
اس رو پہ بہنے والوں میں شامل نہیں ہوں میں
انجامِ کوہ کن سے ڈرانا مجھے عبث
جینے پہ جان دینے کا قائل نہیں ہوں میں
سچ ہے کہ مجھ میں خوۓ گدائ کی بو نہیں
ہاں تیرے التفات کے قابل نہیں ہوں میں
آساں ہے ہجر بھی مجھے توہینِ عشق سے
طالبؔ تو ہوں ضرور پہ سائل نہیں ہوں میں

بشکریہ وسیم سیّد

Ṭạlbؔ
Maulana Syed Abu Ali Maududi
1979-1903
Ghazal
The world has always considered the mad man.
In reality, there was a mad person who was mad.
The style of love is the most amazing.
One on one day crazy in one on.
Make a storm in the world with a drop.
The pub of pub is born from a prayer.
So why are you able to live in the world?
Be a beautiful man, o my male
The drink of the moon is the bartender.
You are the one who is the one who is the one who
There is a fire in you, then what is the need of candle?
Be the one who is the one who is the one who
We want cash, we are not convinced.
Why does he recite us, this story of heaven
Don't be disappointed with the indifference of the bartender.
There is a lot of rotation, now the measure of
In The Transfiguration of every idol, it itself is very beautiful.
You are the one who is the one who is the
It is difficult to find the heart and soul.
It is possible if you are in your heart.
(copy by monthly ھ wmy̰w simelane rawalpindi fbrwry̰ 1992)
Maulana's Nana Qurban Ali Baig was counted in the special students of ghalib. This poetry is very famous.
If you don't have a tight manual
Fitness is a thousand blessing
Maulana Also did poetry but I could not find his word. This poem is the second poem that has passed through my eyes and this is what I have found in the magazine Danish Embassy Iran Islamabad in the edition 29
The first ghazal is probably of 1932 which is included in allama ạbwạlʿạly̰ maududi hayat and services ڈ ạḵ ٹ rạbwdẖr corrective.
Ghazal
I am not able to get the ear of nature.
Don't melt with sorrow because I am not your heart.
The one who is in the heart is the one who is the one who is
I am not the destination of every moment.
It is a determination that I should turn the face of the river
I am not among those who flow on this cry.
What is the meaning of the mountain?
I am not convinced of giving life on living.
It is true that I don't have the smell of kẖw ے̉
Yes, I am not capable of your words.
Separation is easy for me with love.
I am a student, I am not a beggar.

Courtesy of Waseem Sayeed

Translated


جواب چھوڑیں