سلیم کوثر (تازہ غزل) تجھ کو پانے کی تمنا ، تجھے …

سلیم کوثر
(تازہ غزل)
تجھ کو پانے کی تمنا ، تجھے کھونا تو نہیں
موسمِ ہجر ہے یہ کوئ کرونا تو نہیں
میں بدلتے ہوئے حالات کا آئینہ ہوں
ہنسنے والے تُو مجھے دیکھ کے رونا تو نہیں
دیکھنا چاہتا ہوں میں ترے جلووں کی نمود
جاگنا چاہتا ہوں میں ابھی سونا تو نہیں
کس لئے جمّع کیے جاتا ہے دنیا دل میں
یہ ترا بوجھ کسی اور نے ڈھونا تو نہیں
کیسے طوفاں سے گذرتی ہوئ آئ ہے اور اب
ناو ساحل سے یہ کہتی ہے ڈبونا تو نہیں
میرے ہونے سے اگر فرق نہیں پڑتا کوئ
پھر جو ہونا ہے مرا یہ کوئ ہونا تو نہیں
آج اس نے عجب انداز سے پوچھا ہے سلیم
دل ہی ٹوٹا ہے نا اس با ر کھلونا تو نہیں

Saleem Kausar
(Fresh Ghazal)
I wish to get you, I don't want to lose you
It is the season of separation, it is not a
I am the mirror of changing situation
Those who laugh, you don't cry after seeing me.
I want to see the glitter of your light.
I want to wake up I don't sleep yet
Why is the world in the heart?
This is not your burden by anyone else.
How have you gone through the storm and now
This says to nau beach not to be ڈ bwnạ
If it doesn't matter if I being mine
Then what I want to happen, I don't have to happen.
Today he has asked a strange way saleem
My heart is broken, not a toy.

Translated


جواب چھوڑیں