سید سلیمان ندوی 1953 – 1884 مولانا سید سلمان ندو…

سید سلیمان ندوی
1953 – 1884
مولانا سید سلمان ندوی نہ صرف صاحبِ طرز ادیب ہی تھے بلکہ بہترین شاعر بھی تھے ۔
اپریل1917ء میں طویل علالت کے بعد مولانا کی اہلیہ کا انتقال ہو گیا جس کا مولانا نے معارف کے اپریل کے ' شذرات ' میں ذکر کیا
'' آخر خدا کی مرضی پوری ہوئ دو ماہہ شدید علالت کے بعد میری رفیقۂ زندگی نے چوبیس سال کی عمر میں اس عالم کو الوداع کہا ۔ ——- مرحومہ نے تیرہ سال تک میری زندگی کی رفاقت کی ۔
میں مرحومہ کی زندگی میں غالبؔ مغفور کا یہ شعر پڑھا کرتا تھا
میں بھی تمہیں بتاؤں کہ مجنوں نے کیا کیا
فرصت کشاکشِ غمِ پنہاں سے گر ملے
اس پیکرِ وفا نے اپنی جان دیکر مجھے علم و ملت کی خدمت گزاری کے لۓ کشاکشِ غمِ پنہاں سے فرصت عطا کی لیکن ایک ایسا کانٹا دل میں چبھ کر رہ گیا جو شاید عمر بھر نہ نکلے ۔
عمر بھر کا تو نے پیمانِ وفا باندھا تو کیا
عمر کو بھی تو نہیں ہے پائیداری ہاۓ ہاۓ
تیرے دل میں گر نہ تھا آشوبِ غم کا حوصلہ
تو نے پھر کیوں کی تھی میری غمگساری ہاۓ ہاۓ
گوش محرومِ پیام و چشم محرومِ جمال
ایک دل تسپر یہ نا امیدواری ہاۓ ہاۓ
اس سانحہ پر ایک مرثیہ لکھا تھا جو اسی شمارہ میں شامل ہے ۔
مرگِ یار
وارداتِ حالیہ
ہمسفر وادیِ ہستی میں وہ دلبر نہ ہوا
شمع اس راہ میں اس کا رخِ انور نہ ہوا
ہجر کا خوف کبھی اور کبھی ہجر کا رنج
چین گاہے دلِ مضطر کو میسر نہ ہوا
تیر جو آے فلک سے ہدف ان کا میں تھا
ظلم کہیۓ نہ کبھی اس کو جو مجھ پر نہ ہوا
درد اٹھ اٹھ کے میرے دل میں ٹھہر جاتا ہے
کیوں رگِ دل کی جگہ سینہ میں نشتر نہ ہوا
یہ تماشا ہے جہاں خواب ہے میں مانتا ہوں
پر یہ کیوں خواب میرے واسطے شب بھر نہ ہوا
کس سے کیجے دلِ شیدا گلہ تنہائ
مسند آرا میرے پہلو میں جو دلبر نہ ہوا
نازِ بیجا تو اٹھایا ہے پہ مرنے والے
میں ترے نازِ بجا کا کبھی خوگر نہ ہوا
تیرے جانے پہ گمان برہمئ دہر کا تھا
تو گیا اور بپا دہر میں محشر نہ ہوا
دل کو کیوں موردِ احساس بنایا یارب
حسرت اس کی ہے کہ یہ دل ہوا پتھر نہ ہوا
حیف اس خون کی قسمت جو مژہ سے ٹپکے
قطرۂ اشک ہوا بادۂ احمر نہ ہوا
گر قضایاے جہان قابلِ تغیر نہیں
کیوں نہ کہیۓ کہ مرے واسطے داور نہ ہوا
دل میں بیٹھا ہو کوئ اس سے تسلی تو نہیں
پردۂ دل میں جو ہے ر سرِ منظر نہ ہوا
قہر آلود نظر میں نگہِ لطف بھی تھی
لطف فرما نہ رہا جب وہ ستمگر نہ ہوا
باعثِ رنج ہے امید کا پیدا ہونا
یارب اس خرمنِ امید میں اخگر نہ ہوا
غمزدہ
سلیمان
…..
بشکریہ وسیم سیّد

Syed Suleiman Nadvi
1953 – 1884
Maulana Syed Salman Nadvi was not only a great style but also the best poet.
After long illness in April 1917, Maulana's wife died, whose maulana mentioned in the ' Sẖdẖrạt ' of April ' April.
" finally, the will of God has been fulfilled, after the extreme illness, my life said goodbye to this world at the age of years ——- the prophet made my life for years.
I used to read this poetry of ghalib mgẖfwr in the life of the prophet.
I will also tell you what majnu did
The time of time has fallen from the sorrows of
This person gave me his life and gave me time to serve knowledge and nation, but a thorn remained in the heart that may not come out of life.
If you have made me loyal to the whole life then what
Even the age is not there, it is the one who is
I did not fall in your heart, the motivation of sorrow.
Why did you do it again?
Gosh mḥrwmi message and eyes beautiful beauty
One heart is not a hope.
It was written on this incident which is included in the same edition.
My friend
Wạrdạti recent
He did not become a lover in the companion of
The Candle was not anwar in this way.
Fear of separation sometimes and sometimes the grief of separation
China has not been available to the heart.
The Arrow that came from the sky was in them.
Don't ever say injustice to the one who has not happened to me
Pain gets up and stops in my heart
Why didn't you get nishtar in the heart instead of the heart
This is a spectacle where there is a dream I believe
But why didn't this dream come for me all night
To whom should I do my heart?
Blasting Pimp on my side that didn't get lover
I have raised my life but I have raised my life
I have never been proud of your voice.
I thought about your departure.
So went and there was no judgement in the darkness.
Why did you make my heart realize, Lord
Regret is that this heart is not a stone.
Fie the luck of the blood that drip from the mzẖ ہ
The tears of tears did not become red.
The world is not able to change.
Why don't you say that I didn't get angry for me
You are sitting in the heart, no one is calm with him.
The one who is in the heart is not seen.
There was a lot of fun in anger.
Don't enjoy when he didn't yooo
It is sad to be born of hope.
Lord, did not fall in this hope.
Grieving
Solomon
…..
Courtesy of Waseem Sayeed

Translated


جواب چھوڑیں