درد کے لمحوں میں ڈھال لگتا ہے ترا خیال ہی مجھ کو …

درد کے لمحوں میں ڈھال لگتا ہے
ترا خیال ہی مجھ کو وصال لگتاہے

گھٹن کچھ ایسی کہ مررہی ہے زندگی
یہ قیدوبند کا موسم وبال لگتا ہے

جو شب کو بھیگتے کاجل میں جاگ اٹھے
وہ درد مجھ کو بڑا باکمال لگتا ہے

یہ دھند بکھری ہے یا ناتمام خواہشوں کا
بچھا ہوا مری پلکوں پہ جال لگتا ہے

مری نگاہ میں ہے کسی نظر کا فسوں
کچھ اور دیکھنا اب محال لگتا ہے

رضوانہ انجم


جواب چھوڑیں