رموزِ مملکت – ادا جعفری آپ مسند نشیں آپ جو چاہیں…

رموزِ مملکت – ادا جعفری

آپ مسند نشیں
آپ جو چاہیں ارشاد فرمائیے
مصلحت آپ کی
آپ جن سے مخاطب ہوئے
ان کی بات اور ہے
ان کی مجبوریاں اور ہیں
وہ سہولت کی خاطر کبھی
اور کبھی صرف جینے کی خاطر بھی
ہر وعدہ ٔدلکشا کی
حقیقت کو پہچاننے سے گریزاں رہیں
بات بے بات بھی
مرحبا کہہ اٹھیں
آپ فرمائیے
اپنے ارشاد پر آپ کو خود یقیں آسکا
یہ جو اہلِ رضا ہیں
یہ بے بس ہیں ان پر
کبھی آپ کا دل دُکھا
کوئی کانٹا چبھا؟


جواب چھوڑیں