میرے بدن میں تھی تری خوشبوئے پیرہن شب بھر مرے وج…

میرے بدن میں تھی تری خوشبوئے پیرہن
شب بھر مرے وجود میں مہکا ترا بدن

ہوں اپنے ہی ہجومِ تمنا میں اجنبی
میں اپنے ہی دیارِ نفس میں جلا وطن

سب پتھروں پہ نام لکھے تھے رفیقوں کے
ہر زخمِ سر ہے سنگِ ملامت پہ خندہ زن

اب دشتِ بے اماں ہی میں شاید ملے پناہ
گھر کی کھلی فضا میں تو بڑھنے لگی گھٹن

ہر آدمی ہے پیکرِ فریاد ان دنوں—!!!
ہر شخص کے بدن پہ ہے کاغذ کا پیرہن

خوش فہم ہیں کہ صرف روایت پرست ہیں
خوش فکر تھے کہ لے اڑے تاریخ کا کفن

اس دور میں یہاں بھی فلسطین کی طرح
کچھ لوگ بے زمیں ہوئے کچھ لوگ بے وطن

مثلِ صبا کوئی اِدھر آیا ، اُدھر گیا
گھر میں بسی ہوئی ہے مگر بوئے پیرہن

سرشار! میں نے عشق کے معانی بدل دیے
اس عاشقی میں پہلے نہ تھا وصل کا چلن

(سرشار صدیقی)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

I was in my body and narrowed.
Your body is in my existence all night.

I am a stranger in my own wish.
I am burnt in my own self.

All the stones were written on the rocks.
Every person is a head of blame.

Now I may find shelter in the wilderness of amma.
In the open atmosphere of the house, the suffocation started growing.

Every man is crying these days —!!!
The narrowed of paper is on everyone's body.

Happy understanding that only tradition
I was happy to take the shroud of the history.

In this era here also like Palestine
Some people became helpless, some people are helpless.

Mtẖli Saba someone came here, went there
There is a lot of people in the house but the boy is

Lion! I changed the meaning of love
There was no way of meeting in this love.

(Srsẖạr Siddiqui)

Al-ạlmrsl :-:

Translated

جواب چھوڑیں