شب و روز ہے جو ہما ہمی مِرے چار سُو یہ عروج پر ہے…

شب و روز ہے جو ہما ہمی مِرے چار سُو
یہ عروج پر ہے کوئی کمی مِرے چار سُو

کوئی میری آب و ہوا میں رہتا تو جانتا
کہ یونہی تو برف نہیں جمی مِرے چار سُو

صفِ حاسداں سے جو تیر آیا ، پھسل گیا
کوئی چیز ایسی ہے ریشمی مِرے چار سُو

مِرے چار سُو جو حصار ہے، تِرا فیض ہے
تِری نسبتوں سے خوشی غمی مِرے چار سُو

تِری چاکری میں قطار بند ہے زندگی
تِرے حُکم سے یہ امی جمی مِرے چار سُو

مِرے تار اپنے مدارِ نُور میں جوڑ دے
تِری روشنی رہے دائمی مِرے چار سُو

مِری کیا خطا کہ سخن میں رنگ ہے بَین سا
کہ فضائے دہر ہے ماتمی مِرے چار سُو

اسی چشمِ گریہ کناں سے ہوں میں ہری بھری
کہ بحال رکھّی گئی نمی مِرے چار سُو

مِرے دُکھ اُڑائے چلی نجانے کہاں کہاں
یہ ہوا چلی ہے جو پچھّمی مِرے چار سُو

تِرے نام کی گھنی چھاؤں سے ہوئی بے اثر
کڑی دھوپ جیسی یہ برہمی مِرے چار سُو

حمیدہ شاہین


جواب چھوڑیں