ہندی نظم؛ شاعرہ: روپم مشر؛ مترجم: آفتاب احمد، کولم…

ہندی نظم؛ شاعرہ: روپم مشر؛ مترجم: آفتاب احمد، کولمبیا یونیورسٹی، نیویارک
                       ***
ہم دونوں نئے نئے پیار میں تھے
اس کے ہاتھ میں مہنگا سا فون تھا اور بانہہ میں اوسط سی میں!
فون میں کئی خوبصورت لڑکیوں کی تصویریں دکھاتے ہوئے اُس نے مُسکراتے ہوئے فخر سے کہا
دیکھ رہی ہو یہ سب مُجھ پہ مرتی تھیں
میں نے کہا اور تم؟ اس نے کہا ظاہر ہے میں بھی پیار کرتا تھا
مجھے بھی تھوڑی سی پُھریری ہوئی
میں نے حسرت اور تھوڑی رومانیت سے لجاتے ہوئے کہا
میرے بھی اسکول میں ایک پگلا سا لڑکا تھا
مجھے بہت اچھا لگتا تھا
ہم خوب باتیں کرتے تھے!
تب اس نے میری طرف حقارت سے دیکھ کر کہا
اچھا تو تم ایک پاگل سے پھنسی تھیں!
میں آج تک نہ سمجھ پائی زبان کی یہ قواعد کہ ایک ہی احساس میں وہ کیسے پیار میں تھا اور میں کیسے پھنسی تھی

بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2839260752971106

جواب چھوڑیں