کترا کے گُلستاں سے جو سوئے قفس چلے ایسی کو…

کترا کے گُلستاں سے جو سوئے قفس چلے
ایسی کوئی ہوا بھی تو اب کے برس چلے

آدابِ قافلہ بھی ہیں زنجیرِ پائے شوق
یہ کیا سفر اسیرِ صدائے جرس چلے

مانا ہوائے گُل سے تھے بے اختیار ہم
پھر بھی بچا کے راہ کا ہر خار و خس چلے

پامال ہو کے رہ گئے جشنِ بہار میں
یہ فکر تھی چمن پہ خزاں کا نہ بس چلے

اے چشمۂ حیات نہ دی تُو نے بوند بھی
ہم تشنہ کام ابر کی صورت برس چلے

صُبحیں بھی آ کے زہر رگِ جاں میں بھر نہ دیں
ہجرانِ یار تیرے اندھیرے تو ڈس چلے

اُن کی یہ ضد وہ دیکھیں گدائے‌ رفو ہمیں
ہم کو یہ فکر اُن کے گریباں پہ بس چلے

تھا پاسِ آبروئے‌ تمنا ہمیں وحیدؔ
چُن کر گُلِ مراد سب اہلِ ہوس چلے

(وحیدؔ اختر)

المرسل: فیصل خورشید

The cage that slept from the garden of Katra
If something like this happened, then it will be years now.

The manners of the caravan are also fond of chains
What kind of journey is this, the captives of Sudai Jars

I agree that we were helpless from the flowers
Even then, every thorn of the path is saved.

They were crushed in the spring celebration.
It was a worry about autumn on the garden, but it could not control.

O my eyes of life, you did not give me a drop of life
We are thirsty and going like clouds.

Don't fill the poison in the vein of life by coming in the morning
Oh my beloved, your darkness will bite.

This stubbornness of them, they should look at us.
Let us have this worry on their collar

Waheed, we had the wish of honor.
All the people of lust go after choosing Gul Murad.

Waheed Akhtar

Marsal: Faisal Khursheed

Translated


جواب چھوڑیں