ضبط اپنا شعار تھا ، نہ رہا دل پہ کچھ اختیار ت…

ضبط اپنا شعار تھا ، نہ رہا
دل پہ کچھ اختیار تھا، نہ رہا

دلِ مرحوم کو خدا بخشے
ایک ہی غمگسار تھا ، نہ رہا

اُن کی بے مہریوں کو کیا معلوم
کوئی امّیدوار تھا ، نہ رہا

کچھ زمانے کو سازگار سہی
جو ہمیں سازگار تھا، نہ رہا

اب گریباں کہیں سے چاک نہیں
شغلِ فصلِ بہار تھا ، نہ رہا

مہرباں ! یہ مزارِ فانی ہے
آپ کا جاں نثار تھا ، نہ رہا

(فانی بدایونی)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

جواب چھوڑیں