عرصۂ ظلمتِ حیات کٹے ہم نفس مسکرا کہ رات کٹے …

عرصۂ ظلمتِ حیات کٹے
ہم نفس مسکرا کہ رات کٹے

ثمرِ آرزو کا ذکر نہ چھیڑ
چھونے پائے نہ تھے کہ ہات کٹے

کاش ہر زلف تیغ بن جائے
کاش زنجیرِ حادثات کٹے

اے بقائے دوام کے مالک
کس طرح عمرِ بے ثبات کٹے

آدمی جستجوئے راہ میں ہے
تجھ کو ضد ہے رہِ نجات کٹے

شبِ خلوت سخن سخن پہ داد
اور سرِ بزم بات بات کٹے

(جعفر طاہر)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

جواب چھوڑیں