زمانہ بڑے شوق سے سن رہا تھا ہمیں سو گئے داستاں ک…

زمانہ بڑے شوق سے سن رہا تھا
ہمیں سو گئے داستاں کہتے کہتے
ثاقب لکھنوی
..
کہاں تک جفا حسن والوں کی سہتے
جوانی جو رہتی تو پھر ہم نہ رہتے

لہو تھا تمنا کا آنسو نہیں تھے
بہائے نہ جاتے تو ہرگز نہ بہتے

وفا بھی نہ ہوتا تو اچھا تھا وعدہ
گھڑی دو گھڑی تو کبھی شاد رہتے

ہجوم تمنا سے گھٹتے تھے دل میں
جو میں روکتا بھی تو نالے نہ رہتے

میں جاگوں گا کب تک وہ سوئیں گے تا کے
کبھی چیخ اٹھوں گا غم سہتے سہتے

بتاتے ہیں آنسو کہ اب دل نہیں ہے
جو پانی نہ ہوتا تو دریا نہ بہتے

زمانہ بڑے شوق سے سن رہا تھا
ہمیں سو گئے داستاں کہتے کہتے

کوئی نقش اور کوئی دیوار سمجھا
زمانہ ہوا مجھ کو چپ رہتے رہتے

مری ناؤ اس غم کے دریا میں ثاقبؔ
کنارے پہ آ ہی لگی بہتے بہتے

The world was listening with great interest.
We fell asleep telling the story
Saqib Lucknowi
..
How long will the unfaithful people tolerate
If youth lived, we would not have lived.

It was blood, not tears of desire
If they were not flown, they would not have flowed

It was good if there was no loyalty
If you watch two moments, you will be happy sometimes.

The crowd used to decrease in the heart due to desire
If I had stopped, the canals would not have remained.

How long will I wake up till they sleep
Sometimes I will scream while tolerating grief.

Tears tell that there is no heart anymore
If there was no water, the river would not flow

The world was listening with great interest.
We fell asleep telling the story

Considered some impression and some wall
It's been time since I kept quiet.

My now is in the river of sorrow Saqib
It is coming to the shore and flowing.

Translated


جواب چھوڑیں