زندگی کیا ہوئے وہ اپنے زمانے والے؟ یاد آتے ہیں …

زندگی کیا ہوئے وہ اپنے زمانے والے؟
یاد آتے ہیں بہت دل کو دُکھانے والے

زندگی چپ ہے، نسیمِ سحری بھی چپ ہے
جانے کس سمت گئے ٹھوکریں کھانے والے؟

اجنبی بن کے نہ مل عمرِ گریزاں ہم سے
تھے کبھی ہم بھی ترے ناز اٹھانے والے

آ کے میں دیکھ لوں کھویا ہوا چہرہ اپنا
مجھ سے چھپ کر مری تصویر بنانے والے

ہم تو اک دن نہ جئے اپنی خوشی سے اے دل
اور ہوں گے ترے احسان اٹھانے والے

دل سے اٹھتے ہوئے شعلوں کو کہاں لے جائیں؟
اپنے ہر زخم کو پہلو میں چھپانے والے

نکہتِ صبحِ چمن! بھول نہ جانا کہ تجھے
تھے ہمِیں نیند سے ہر روز جگانے والے

ہنس کے اب دیکھتے ہیں چاکِ گریباں میرا
اپنے آنسو مرے دامن میں چھپانے والے

کس سے پوچھیں، یہ سِیَہ رات کٹے گی کس دن؟
سو گئے جا کے کہاں خواب دکھانے والے؟

ہر قدم دُور ہوئی جاتی ہے منزل ہم سے
راہ گم کردہ ہیں خود راہ دکھانے والے

اب جو روتے ہیں مرے حالِ زبوں پر اخترؔ
کل یہی تھے مجھے ہنس ہنس کے رُلانے والے

(اخترؔ سعید خان)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

What happened to the life of their time?
I miss those who hurt my heart a lot

Life is silent, Naseem Sehri is also silent.
Don't know where the stumble people have gone?

Don't meet me like a stranger, I'll be away from you.
We were also going to be proud of you.

Come and see my lost face
Those who make my picture secretly from me

O heart, we will not live one day with our happiness.
And there will be those who receive your favor.

Where should we take the flame that rises from the heart?
Those who hide their every wound in the side

Garden of morning! Do not forget that you
We were the ones who woke us up from sleep every day

Let's laugh and see my collar.
Those who hide their tears in my feet

Whom should I ask, on which day will this dark night pass?
Where are those who show dreams after going to sleep?

Every step goes away from us.
Those who show the way are lost.

Now those who cry over my tongue Akhtar
Yesterday these were the ones who made me cry laughing

(Akhtar Saeed Khan)

Marsal :-: Abul Hasan Ali Nadvi

Translated


جواب چھوڑیں