Itna Maloom Hai……………….!.

اتنا معلوم ہے!
پروین شاکر

اپنے بستر پہ بہت دیر سے میں نیم دراز
سوچتی تھی کہ وہ اس وقت کہاں پر ہوگا
میں یہاں ہوں مگر اس کوچۂ رنگ و بو میں
روز کی طرح سے وہ آج بھی آیا ہوگا
اور جب اس نے وہاں مجھ کو نہ پایا ہوگا!؟

آپ کو علم ہے وہ آج نہیں آئی ہیں؟
میری ہر دوست سے اس نے یہی پوچھا ہوگا
کیوں نہیں آئی وہ کیا بات ہوئی ہے آخر
خود سے اس بات پہ سو بار وہ الجھا ہوگا
کل وہ آئے گی تو میں اس سے نہیں بولوں گا
آپ ہی آپ کئی بار وہ روٹھا ہوگا
وہ نہیں ہے تو بلندی کا سفر کتنا کٹھن
سیڑھیاں چڑھتے ہوئے اس نے یہ سوچا ہوگا
راہداری میں ہرے لان میں پھولوں کے قریب
اس نے ہر سمت مجھے آن کے ڈھونڈا ہوگا

نام بھولے سے جو میرا کہیں آیا ہوگا
غیر محسوس طریقے سے وہ چونکا ہوگا
ایک جملے کو کئی بار سنایا ہوگا
بات کرتے ہوئے سو بار وہ بھولا ہوگا
یہ جو لڑکی نئی آئی ہے کہیں وہ تو نہیں
اس نے ہر چہرہ یہی سوچ کے دیکھا ہوگا
جان محفل ہے مگر آج فقط میرے بغیر
ہائے کس درجہ وہی بزم میں تنہا ہوگا
کبھی سناٹوں سے وحشت جو ہوئی ہوگی اسے
اس نے بے ساختہ پھر مجھ کو پکارا ہوگا
چلتے چلتے کوئی مانوس سی آہٹ پا کر
دوستوں کو بھی کس عذر سے روکا ہوگا

یاد کر کے مجھے نم ہو گئی ہوں گی پلکیں
''آنکھ میں پڑ گیا کچھ'' کہہ کے یہ ٹالا ہوگا
اور گھبرا کے کتابوں میں جو لی ہوگی پناہ
ہر سطر میں مرا چہرہ ابھر آیا ہوگا
جب ملی ہوگی اسے میری علالت کی خبر
اس نے آہستہ سے دیوار کو تھاما ہوگا
سوچ کر یہ کہ بہل جائے پریشانی دل
یوں ہی بے وجہ کسی شخص کو روکا ہوگا!

اتفاقاً مجھے اس شام مری دوست ملی
میں نے پوچھا کہ سنو آئے تھے وہ؟ کیسے تھے؟
مجھ کو پوچھا تھا مجھے ڈھونڈا تھا چاروں جانب؟
اس نے اک لمحے کو دیکھا مجھے اور پھر ہنس دی
اس ہنسی میں تو وہ تلخی تھی کہ اس سے آگے
کیا کہا اس نے مجھے یاد نہیں ہے لیکن
اتنا معلوم ہے خوابوں کا بھرم ٹوٹ گیا!

So much known!
Parveen Shakir

In my bed too late I'm semi drawer
Wonder where he would be at this time
I'm here but in this coach color and smell
Like everyday he would have come today
And when he wouldn't have found me there!?

You know she didn't come today?
He must have asked every friend of mine
Why didn't she come, what happened?
He must have been confused a hundred times about this.
Tomorrow she come so I won't speak to her
He will be angry many times
If he is not there then how difficult is the journey of height
Climbing the stairs he must have thought this
Near flowers in green lawn in corridor
He must have searched me everywhere

My name must have come somewhere by forgetting
He would have been shocked in an unconscious way
One sentence must have been recited many times
He must have forgotten a hundred times while talking
This girl who has come new is not there
He must have seen every face thinking like this
Life is a gathering but today only without me
Alas, how will he be alone in the gathering?
He must have been scared of silence.
He must have called me again without any reason
While walking after getting a familiar sound
What excuse would you have stopped your friends?

My eyelashes must have got wet by remembering me
It will be averted after saying ′′ something fell in the eye ′′
And the shelter that was taken in the books of fear
My face must have emerged in every line
When he got the news of my illness
He must have held up the wall slowly
Think that the pain of the heart will be over
This is how someone would have been stopped for no reason!

Apparently I found my friend this evening
I asked, did they come? How were you?
Asked me, I was looking for me all around?
He saw me for a moment and then made me laugh
There was so much bitterness in this laugh that beyond that
I don't remember what he said but
I know that the illusion of dreams has been broken!

Translated


جواب چھوڑیں