جناب سیّد اقبال عظیم ایک قادرالکلام اور کہنہ مشق …

جناب سیّد اقبال عظیم
ایک قادرالکلام اور کہنہ مشق شاعر
نعت گوئی میں بھی جناب اقبال عظیم نے عام شاعروں کی طرح ادَب کا دامن ہاتھ سے نہیں چھوڑا ۔۔۔۔زیرِ نظر ، عقیدت سے بھری ہوئی نعت معروف شاعر ، پروفیسر جناب سیّد اقبال عظیم کی تحریر کردہ ہے جو انتہائی باادَب اور ہوشمند نعت گو تھے۔ باوجود اسکے کہ اپنی ظاہری بینائی کھو چکے تھے۔۔۔۔پِھر بھی انہوں نے "مدینے کا سفر ہے اور مَیں نم دیدہ نم دیدہ"۔۔۔ اور "فاصلوں کو تکلّف ہے ہم سے اگر" جیسی شہرَہءِآفاق نعتیں تحریر فرمائیں۔ ان نعتوں کا ایک ایک شعر اس بات کا پتہ دے رہا ہے کہ وہ دربارِ رسالت صلّی اللّٰہُ علَیہ وَآلِہ وسلّم میں قبولیت کی سند سے سرفراز کئے جا چکے تھے کیونکہ صرف اور صرف ادَب ہی اس ہستی (صلّی اللّٰہُ علَیہ وَآلِہ وسلّم) تک رسائی کا ذریعہ ہے(خلیق الرحمان)
سارے نبیوں کے عہدے بڑے ہیں لیکن آقا ﷺکا منصب جداہے​
وہ امامِ صفِ انبیاؑ ء ہیں ان کا رتبہ بڑوں سے بڑاہے​
​​
کوئی لفظوں سے کیسے بتا دے ان کے رتبے کی حد ہے تو کیاہے​
ہم نے اپنے بڑوں سے سنا ہے صرف اللہ ان سے بڑاہے​
​​
وہ جو اک شہر نور الہدیٰ ہے جلوہ گاہوں کا اک سلسلہ ہے​
جس کی ہر صبح شمس الضحیٰ ہے جس کی ہر شام بدر الدجیٰ ہے​
​​
نام جنت کا تم نے سنا ہے میں نے اس کا نظارا کیاہے​
میں یہاں سے تمہیں کیا بتا دوں ان کی نگری کی گلیوں میں کیاہے​
​​
کتنا پیارا ہے موسم وہاں کا کتنی پرکیف ساری فضاہے​
تم میرے ساتھ خود چل کے دیکھو گرد طیبہ بھی خاک شفاہے​
​​
مستقل ان کی چوکھٹ عطا ہو میرے معبود یہ التجاہے​
کوئی پوچھے تو یہ کہ سکوں میں باب جبرئیل میرا پتہ ہے۔
۔۔۔۔۔۔
بشکریہ حکیم خلیق الرحمان

Mr. Syed Iqbal the Great
A Qadir Kalam and a poet who is practicing practice.
Even in the Naat, Mr. Iqbal Azeem did not leave his hand like a common poets A Naat filled with devotion is written by a well-known poet, Professor Sayeed Iqbal Azeem, who was very devout and sensible Naat. Even though they had lost their apparent sight yet they wrote ′′ the journey to Madina and I am wet eyes and ′′ the distance is in trouble with us ′′ as the city of Afaq Naat. One of these chants. The poetry shows that he was exalted in the Darbar-e-Rasulat (peace be upon him) with the certificate of acceptance, because only and only Adab is the source of access to that person (peace be upon him) (Khaliq-ur-Rehman )
All the prophets have great posts, but the position of the Prophet jdạہے jdạہے jdạہے w
He is the Imam of the Prophets. His status is greater than the elders.
​​
How can someone tell with words, what is the limit of their status?
We have heard from our elders, only Allah is greater than them.
​​
The city of Noor Al-Dhi is a series of beautiful places.
Whose every morning is Shams-ul-Adha, whose every evening is Badr Al-Dajji
​​
You have heard the name of heaven, I have seen it.
What should I tell you from here, what is in the streets of their city
​​
How beautiful is the weather there, how safe is the whole atmosphere
You walk with me yourself and see the surrounding Tayyaba is also dusty.
​​
May his threshold be granted forever, my God, this is my request.
If someone asks, tell me that Bob Gabriel is my address in peace.
۔۔۔۔۔۔
Courtesy of Hakeem Khalique ur Rehman

Translated


جواب چھوڑیں