خموشی سے میرے کمرے میں اتر آئی خموشی پھر سے سای…

خموشی سے
میرے
کمرے میں اتر آئی خموشی پھر سے
سایہ شام غریباں کی طرح
شورش دیدہ گریاں کی طرح
موسم کنج بیاباں کی طرح
کتنا بے نطق ہے یادوں کا ہجوم
جیسے ہونٹوں کی فضا یخ بستہ
جیسے لفظوں کو گہن لگ جائے
جیسے روٹھے ہوۓ رستوں کے مسافر چپ چاپ
جیسے مرقد کے سرہانے کوئی خاموش چراغ
جیسے سنسان سے مقتل کی صلیب
جیسے کجلائی ہوئی شب کا نصیب
/
میرے کمرے میں اتر آئی خموشی پھر سے
پھر سے
میرے زخموں کی قطاریں جاگیں
اول شام چراغوں کی طرح
ہر نئے زخم نے پھر یاد دلایا مجھہ کو
اسی کمرے میں کبھی
محفل احباب کے ساتھہ
گنگناتے ہوۓ لمحوں کے شجر پھلتے تھے
رقص کرتے ہوۓ جذبوں کے دہکتے لمحے
قریہ جاں میں لہو کی صورت
شمع وعدوں کی طرح جلتے تھے
سانس لیتی تھی فضا میں خوشبو
آنکھہ میں " گلبن مرجان " کی طرح
سانس کے ساتھہ گہر ڈھلتے تھے
/
آج کیا کہئے کہ ایسا کیوں ہے ؟
شام چپ چاپ
فضا یخ بستہ
دل، مرا دل کہ سمندر کی طرح زندہ تھا
تیرے ہوتے ہوۓ تنہا کیوں ہے ؟
تو کہ خود چشمہ آواز بھی ہے
میری محرم میری ہمراز بھی ہے
تیرے ہوتے ہوۓ ہر سمت اداسی کیسی ؟
شام چپ چاپ
فضا یخ بستہ
دل کے ہمراہ بدن ٹوٹ رہا ہو جیسے
روح سے رشتہ جاں چھوٹ رہا ہو جیسے
/
اے کہ تو چشمہ آواز بھی ہے
حاصل نغمگی ساز بھی ہے
اب کشا ہو کہ سر شام فگار
اس سے پہلے کہ شکستہ دل میں
بدگمانی کی کوئی تیز کرن چبھہ جائے
اس سے پہلے کہ چراغ وعدہ
یک بیک بجھہ جائے
/
لب کشا ہو کہ فضا میں پھر سے
جلتے لفظوں کے دہکتے جگنو
تیر جائیں تو سکوت شب عریاں ٹوٹے
پھر کوئی بند گریباں ٹوٹے
لب کشا ہو کہ میری نس نس میں
زہر بھر دے نہ کہیں
وقت کی زخم فروشی پھر سے
لب کشا ہو کہ مجھے ڈس لے گی
خود فراموشی پھر سے
میرے کمرے میں اتر آئی
"خموشی پھر سے "
/
محسن نقوی

From the silence
My
Silence came down in the room again
Shadow of evening like poor
Insurgency is like a vision
The weather is like a wilderness.
The crowd of memories is so uncontrollable
Like the atmosphere of lips is chilling
As if the words get counted
Like the travellers of angry roads silently
Like a silent lamp at the head of a grave
Like the cross of the slain from deserted
Like the fate of the night that was lit.
/
Silence came down in my room again
Again and again
Wake up my wounds lines
First evening like lamps
Every new wound again reminded me
Ever in the same room
Gathering with friends
The trees of humming moments used to grow.
The glowing moments of emotions while dancing
The form of blood in the city of life
The candles used to burn like promises
The fragrance used to breathe in the atmosphere.
Like ′′ glbin coral ′′ in the eye
Deeps used to fall along with breath
/
What to say today, why is it like this?
Evening silently
The atmosphere is chilling
My heart, my heart was alive like an ocean
Why are you alone when you are there?
So that's the sound of the fountain itself
My Muharram is also my confidant
When you are there, what is sadness everywhere?
Evening silently
The atmosphere is chilling
As if the body is breaking with the heart
As if the relationship with the soul is leaving the soul
/
Oh that you are the sound of the fountain too
He is also a song instrument
Now it's time that the evening figar should be done.
Before in a broken heart
A sharp ray of assumption should be bite.
Before the lamp of promise
One back should be extinguished
/
May the lips be open again in the atmosphere
Burning firefly of burning words
When the swim goes, the night of nude is broken.
Then some closed collar broke
May my lips be open or in my veins
Fill the poison or not
Selling the wounds of time again
The lips are so much that it will bite me
Self-fascination again
Came down to my room
′′ The silence is again ′′
/
Mohsin Naqvi

Translated

جواب چھوڑیں