بازارِ زندگی میں جمے کیسے اپنا رنگ ہیں مشت…

بازارِ زندگی میں جمے کیسے اپنا رنگ
ہیں مشتری کے طور نہ بیوپاریوں کے ڈھنگ

مدت سے پھر رہا ہوں خود اپنی تلاش میں
ہر لمحہ لڑ رہا ہوں خود اپنے خلاف جنگ

اک نام لوحِ ذہن سے مٹتا نہیں ہے کیوں
کیوں آخر اس پہ وقت چڑھاتا نہیں ہے رنگ

اس سے الگ بھی عمر تو کٹ ہی گئی مگر
ایک ایک پل کے بوجھ سے دکھتا ہے انگ انگ

شاخِ نہال ذہن پہ خوابوں کے پھول تھے
ہوتا نہ اپنا دستِ جنوں کاش زیرِ سنگ

آواز کے حصار میں دل اب بھی قید ہے
مانگے ہے اب بھی پیرہن لفظ ہر امنگ

کچھ تجربہ بھی اب تو زمانے کا ہو گیا
کچھ دل کے بچپنے سے بھی ہم آ گئے ہیں تنگ

کوچہ بہ کوچہ پھرتے ہیں اب اس طرح بشرؔ
بھٹکے ہے جیسے ہاتھ سے ٹوٹی ہوئی پتنگ

(بشر نواز)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

How can your color be set in the market of life?
There are not the style of businessmen as Jupiter.

I have been roaming around for a long time in search of myself
Fighting every moment against myself.

A name is not erased from the tablet of mind, why?
Why doesn't the time take over it?

Age has been spent apart from this but
Ang Ang looks like a load of every moment

There were flowers of dreams on the branch of Nihal.
I wish I couldn't have my hand with the jinn

The heart is still imprisoned in the hisar of voice
I still ask for a narrow word, every hope

Some experience is now of the time.
We are fed up of some childhood of our heart

Humans like this now roam around every street.
Wandered like a kite broken by hand

(Bashar Nawaz)

Marsal :-: Abul Hasan Ali Nadvi

Translated


جواب چھوڑیں