نہیں جو تیری خوشی لب پہ کیوں ہنسی آئے یہی بہت ہے …

نہیں جو تیری خوشی لب پہ کیوں ہنسی آئے
یہی بہت ہے کہ آنکھوں میں کچھ نمی آئے

اندھیری رات میں کاسہ بدست بیٹھا ہوں
نہیں یہ آس کہ آنکھوں میں روشنی آئے

ملے وہ ہم سے مگر جیسے غیر ملتے ہیں
وہ آئے دل میں، مگر جیسے اجنبی آئے

خود اپنے حال پہ روتی رہی ہے یہ دنیا
ہمارے حال پہ دنیا کو کیوں ہنسی آئے

نہ جانے کتنے زمانوں سے ہم بہکتے ہیں
فقیہہ بہکے تو کچھ لطفِ مے کشی آئے

صلیب و دار کے قصے بہت پرانے ہیں
صلیب و دار تو ہم راہِ زندگی آئے

ہری نہ ہو نہ سہی، شاخِ نخل غم کی اریب
ہمارے گریۂ پیہم میں کیوں کمی آئے

(سلیمان اریب)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

If not your happiness, why did you laugh on your lips?
That's enough to get some tears in the eyes

I am sitting in the casa in the dark night
No hope that light comes in the eyes

They met us but like strangers meet us
He came in the heart, but like strangers came

This world is crying on its own situation
Why did the world laugh at our situation

I don't know for how many times I have been wandering
When the prostitute went astray, there was some enjoyment.

The tales of the cross are very old
We came to the path of life when we were crosses.

Whether it is green or not, the branch of the nakhal branch of sorrow
Why did we decrease in our Grief?

(Solomon Arib)

Marsal :-: Abul Hasan Ali Nadvi

Translated


جواب چھوڑیں