خوشی محمد ناظر کا یومِ وفات October 01, 1944 چود…

خوشی محمد ناظر کا یومِ وفات
October 01, 1944

چودھری خوشی محمد، ناظر تخلص والد کا نام چوھدری مولاداد خاں ، موضع ہریا والا ضلع گجرات پنجاب میں 1389ھ مطابق 1872ء میں پیدا ہوئے۔ کالج کی تعلیم کے لیے علی گڑھ گئے اور جہاں سے 1893ء میں بی اے کی ڈگری لی۔ تعلیم سے فارغ ہو کر ریاست کشمیر میں ایک اعلیٰ عہدے پر مقرر ہوئے ملازمت سے سبکدوش ہونے کے بعد چک جھمرہ ضلع لائلپور میں مقیم ہوئے اوریکم اکتوبر 1944 ء میں انتقال ہوا۔ شاعر کی حیثیت سے وہ شہرت حاصل نہ کر سکے جس کا ان کا کلام ہر طرح سے مستحق تھا۔ علامہ اقبال کے حلقہ احباب میں تھے

کس کی چشم مست یاد آتی رہی
نیند آنکھوں سے مری جاتی رہی

دل تو شوق دید میں تڑپا کیا
آنکھ ہی کم بخت شرماتی رہی

زندگی سے ہم رہے نا آشنا
سانس گو آتی رہی جاتی رہی

عمر بھر ناظرؔ رہے صحرا نورد
بزم گلشن گرچہ یاد آتی رہی

بجھائیں پیاس کہاں جا کے تیرے مستانے
جو ساقیا در مے خانہ تو نہ باز کرے

نہیں وہ لذت آزار عشق سے آگاہ
ستم میں اور کرم میں جو امتیاز کرے

انہیں کے حسن سے ہے گرم عشق کا بازار
دعا خدا سے ہے عمر بتاں دراز کرے

خدا کا نام بھی لو بازوؤں سے کام بھی لو
تو فکر کار خداوند کار ساز کرے

ہوا و حرص سے ناظرؔ رہے جو پاک نظر
تو ہم سری نہ حقیقت کی کیوں مجاز کرے

Death anniversary of Khushi Muhammad Nazir
October 01, 1944

Chaudhry Khushi Mohammad, Nazir Taklis father's name Chaudhry Maula Dad Khan, Bangladesh Haryawala in Gujrat District Punjab, according to 1389 He went to Aligarh for a college education and from where in 1893 b. Took A's degree. After retiring from education and retiring from a high position in the state of Kashmir, Chak Jhumra lived in Lailpur district and died on 1944st October 1944 He was not famous as a poet. He could do what his words deserved in every way. Allama Iqbal's constituency was among his friends.

Whose eyes are missing intoxicating
Sleep died from the eyes

My heart was longing for seeing
The eyes were unfortunate and shy.

We are not familiar with life
The breath kept coming and going

May the desert of Norod remain in sight for the whole life
Even though I remember Bazm Gulshan

Where should I quench your thirst?
The one who doesn't stop at the doorsteps

He is not aware of the pleasure of love.
One who discriminates in torture and kindness

The market of love is hot because of their beauty
I pray to God that he prolongs my life.

Take the name of God, work with your arms too.
So the thoughtful, may the Lord help you.

If you look pure from air and greed
So why should we authorize the truth?

Translated


جواب چھوڑیں