میرے لہجے میں مرے زخم کی گہرائی ہے روشنی رات کے…

میرے لہجے میں مرے زخم کی گہرائی ہے
روشنی رات کے آنگن میں اتر آئی ہے

پھر مجھے پیار کے ساحل پہ ٹھہرنا ہوگا
پھر ترے دل کے دھڑکنے کی صدا آئی ہے

در و دیوار پہ کچھ عکس اتر آتے ہیں
میرے گھر میں عجب انداز کی تنہائی ہے

صرف پھولوں میں نہیں ہیں تیرے چہرے کے رنگ
ماہِ نو بھی تری ٹھہری ہوئی انگڑائی ہے

وہ صبا، سب جسے آوارہ کہا کرتے ہیں
تیرے آنچل کی مہک میرے لیے لائی ہے

قہقہ بار رہو، شعلہْ غم سے نہ ڈرو
ورنہ اس شہرِ ہنر میں بڑی رسوائی ہے

(جاذب قریشی)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

My tone has the depth of my wound
The light has descended in the courtyard of the night

Then I'll have to stay on the beach of love
Again the sound of your heart beat has come.

Some reflections come down on the door and wall
I have a strange loneliness in my house

The colors of your face are not only in flowers
The new month is also your stable yawn.

That Saba, everyone called a wanderer
The fragrance of your veil has brought me.

Keep laughing, don't be afraid of the flame of sorrow
Otherwise there is a big disgrace in this city of skill

(Absorbent Qureshi)

Marsal :-: Abul Hasan Ali Nadvi

Translated


جواب چھوڑیں