میرے پسندیدہ شاعر احمد سلمان بھائی کی شاعری سے انت…

میرے پسندیدہ شاعر احمد سلمان بھائی کی شاعری سے انتخاب

میں تو ہر حال میں خوش ہوں مرے مالک لیکن
تیرے منکر مجھے دیکھیں گے تو کیا سوچیں گے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خُدایا اُن سے کیا برتاؤ ہو گا؟
تُجھے جو احتیاطًا مانتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
ضرورتوں کے مطابق دعا بدلتے رہے
یہ لوگ خود نہیں بدلے خدا بدلتے رہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
دربار میں ہر بات پہ آمین کی آواز
گلیوں میں مگر سورہ یٰسین کی آواز

کب تک میں سنوں گا کہیں لبیک نہ کہہ دوں
بندوق سے آتی ہے ترے دین کی آواز
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
خدا ہیں لوگ گناہ و ثواب دیکھتے ہیں
سو ہم تو روز ہی روز حساب دیکھتے ہیں

کچل کچل کے نہ فٹ پاتھ کو چلو اتنا
یہاں پہ رات کو مزدور خواب دیکھتے ہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
اے ناچتی ہوئی لڑکی نظر ملا مجھ سے
بدن نہیں ، تری آنکھوں کا نم تماشا ہے

یہ کچھ دنوں سے جو شہرِ جنوں کی گلیوں میں
کوئی تماشا نہیں ہے یہ کم تماشا ہے ؟

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
نور ہی نور سے مکھڑے پہ وہ نوری آنکھیں
اس کے انجیل سے چہرے پہ زبوری آنکھیں

چھوڑ آیا ہوں کسی آنکھ میں بینائی کو
اور بچا لایا ہوں چہرے پہ ادھوری آنکھیں

اس کو پہلوں میں بیٹھا کر اسے تکنے کا نشنہ
کس قدر ہوگئی چہرے پہ ضروری آنکھیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کالی رات کے صحراؤں میں نور سپارا لکھا تھا
جس نے شہر کی دیواروں پر پہلا نعرہ لکھا تھا

لاش کے ننھے ہاتھ میں بستہ اور اک کھٹی گولی تھی
خون میں ڈوبی اک تختی پر غین غبارہ لکھا تھا

آخر ہم ہی مجرم ٹھہرے جانے کن کن جرموں کے
فرد عمل تھی جانے کس کی نام ہمارا لکھا تھا

سب نے مانا مرنے والا دہشت گرد اور قاتل تھا
پھر بھی اس کی قبر پہ ماں نے راج دلارا لکھا تھا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
یہ کیا کہ سورج پہ گھر بنانا پھر اس پہ چھاٶں تلاش کرنا
کھڑےبھی ہونا تو دلدلوں پہ پھر اپنے پاٶں تلاش کرنا

نکل کے شہروں میں آ بھی جانا چمکتے خوابوں کو ساتھ لے کر
بلند و بالا عمارتوں میں پھر اپنے گاٶں تلاش کرنا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

دل سے خواہشِ بیتاب لگا دیتا ہے
پھر وہ پابندئ آداب لگا دیتا ہے

لفظ بے صوت ہوں لیکن تیرا کاتب لہجہ
میرے اطراف میں اعراب لگا دیتا ہے

پہلے کہتا ہے کہ افلاک سے آگے دیکھوں
پھر کہیں بیچ میں مہتاب لگا دیتا ہے

ہر وہ الزام جو دشمن نہ لگائے مجھ پر
وہ میرا حلقۂ احباب لگا دیتا ہے

رات دیتا ہے تھکے دن کو تھپکنے کے لیے
پھر تعاقب میں کوئی خواب لگا دیتا ہے

احمد سلمان
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شبنم ہے کہ دھوکا ہے کہ جھرنا ہے کہ تم ہو
دل دشت میں اک پیاس تماشہ ہے کہ تم ہو

اک لفظ میں بھٹکا ہوا شاعر ہے کہ میں ہوں
اک غیب سے آیا ہوا مصرعہ ہے کہ تم ہو

دروازہ بھی جیسے میری دھڑکن سے جڑا ہے
دستک ہی بتاتی ہے پرایا ہے کہ تم ہو

اک دھوپ سے الجھا ہوا سایہ ہے کہ میں ہوں
اک شام کے ہونے کا بھروسہ ہے کہ تم ہو

میں ہوں بھی تو لگتا ہے کہ جیسے میں نہیں ہوں
تم ہو بھی نہیں اور یہ لگتا ہے کہ تم ہو
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کبھی تو بیعت فروخت کر دی کبھی فصیلیں فروخت کر دیں
مرے وکیلوں نے میرے ہونے کی سب دلیلیں فروخت کر دیں

وہ اپنے سورج تو کیا جلا تے مرے چراغوں کو بیچ ڈالا
فرات اپنے بچا کے رکھے مری سبیلیں فروخت کر دیں

انھیں نہ دینا عجیب لوگو سمندروں کی رسائی بھی اب
جنھوں نے پہلے تمہارے دریا تمہاری جھیلیں فروخت کر دیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو دکھ رہا اسی کے اندر جو ان دکھا ہے وہ شاعری ہے
جو کہہ سکا تھا وہ کہہ چکا ہوں جو رہ گیا ہے وہ شاعری ہے

دلوں کے مابین گفتگو میں تمام باتیں اضافتیں ہیں
تمہاری باتوں کا ہر توقف جو بولتا ہے وہ شاعری ہے

یہ شہر سارا تو روشنی میں کھلا پڑا ہے سو کیا لکھوں میں
وہ دور جنگل کی جھونپڑی میں جو اک دیا ہے وہ شاعری ہے

تمام دریا جو اک سمندر میں گر رہے ہیں تو کیا عجب ہے
وہ ایک دریا جو راستے میں ہی رہ گیا ہے وہ شاعری ہے
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
شاخِ امکان پر، کوئی کانٹا اُگا، کوئی غنچہ کھلا، میں نے غزلیں کہیں
زعمِ عیسٰی گریزی میں جو بھی ہوا، میں نے ہونے دیا، میں نے غزلیں کہیں

لوگ چیخا کئے، وہ جو معبود ہے، بس اسی کی ثنا ، بس اسی کی ثنا
میری شہ رگ سے میرے خدا نے کہا، مجھ کو اپنی سنا، میں نے غزلیں کہیں

حبسِ بیجا میں تھی شہر کی جب ہوا، آپ جیتے رہے، آپ کا حوصلہ
میں اصولوں وغیرہ کا مارا ہوا، مجھ کو مرنا پڑا، میں نے غزلیں کہیں

کوئی دُکھ بھی نہ ہو، کوئی سُکھ بھی نہ ہو، اور تم بھی نہ ہو، اور مصرعہ کہیں
ایسا ممکن نہیں، ایسا ہوتا نہیں، لیکن ایسا ہوا، میں نے غزلیں کہیں

عشق دوہی ملے، میں نے دونوں کیے، اک حقیقی کیا، اک مجازی کیا
میں مسلمان بھی، اور سلمان بھی، میں نے کلمہ پڑھا، میں نے غزلیں کہیں
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
گھر کا آنگن تجھے بھاتا نہیں چھاؤں کے بغیر
لوگ پل جاتے ہیں فٹ پاتھ پہ ماؤں کے بغیر

ڈگمگاتا رہا مرمر پہ مرے سچ کا پرند
جھوٹ دیوار پہ چلتا رہا پاؤں کے بغیر
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
کچھ بھی مجھے اچھا یا برا کیوں نہیں لگتا
میں ہوں بھی تو مجھے اس کا پتا کیوں نہیں لگتا

سچائی سے بھرپور ہے گرچہ ترا لہجہ
لیکن تیری نیت سے جڑا کیوں نہیں لگتا

پھرتا ہے اسی شہر میں اب غیر کے ہمراہ
اب شہر کے لوگوں کو برا کیوں نہیں لگتا
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
جو ہم پہ گزرے تھے رنج سارے جو خود پہ گزرے تو لوگ سمجھے
جب اپنی اپنی محبتوں کے عذاب جھیلے تو لوگ سمجھے

وہ جن درختوں کی چھاؤں میں سے مسافروں کو اٹھا دیا تھا،
انہیں درختوں پہ اگلے موسم جو پھل نہ اترے تو لوگ سمجھے

اس ایک کچی سی عمر والی کے فلسفے کو کوئی نہ سمجھا،
جب اس کے کمرے سے لاش نکلی، خطوط نکلے تو لوگ سمجھے

وہ خواب تھے ہی چنبیلیوں سے سو سب نے حاکم کی کر لی بیعت،
پھر اک چنبیلی کی اوٹ میں سے جو سانپ نکلے تو لوگ سمجھے

وہ گاؤں کا اک ضعیف دہقاں سڑک کے بننے پہ کیوں خفا تھا،
جب ان کے بچے جو شہر جاکر کبھی نہ لوٹے تو لوگ سمجھے

(احمد سلمان)

المرسل :-: ابوالحسن علی ندوی

Selection of my favorite poet Ahmed Salman Bhai from poetry

I am happy in every situation my lord but
What will your disbelievers think if they see me
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
God, what will be the deal with them?
Those who take you as precautions
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Prayers kept changing according to the needs
These people did not change themselves, God kept changing.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
The voice of Amen on everything in the court
In the streets but the voice of Surah Yaseen

Till when will I listen, I may not say Labaik
The voice of your religion comes from a gun.
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
It is God, people see sin and reward.
So we look at the reckoning everyday.

Don't go to the sidewalk by crushing it so much
The laborers dream here at night
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
O dancing girl, I got an eye
It's not the body, it's the wet spectacle of your eyes

This has been in the streets of the city of jinn for a few days
It's not a spectacle, it's a little spectacle?

۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Those light eyes on the face of light
Zabri eyes on the face from his gospel

I have left the sight in an eye.
And I have saved the incomplete eyes on my face.

The sign of looking at him in the past.
How much the necessary eyes have become on the face
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Noor Spara was written in the deserts of black night
Who wrote the first slogan on the walls of the city

There was a sour bullet in the small hand of the dead body.
A balloon was written on a plaque drowned in blood

At last we are the culprits of which crimes
I don't know whose name was written by me.

Everyone agreed that the dying person was a terrorist and a murderer
Even then mother wrote Raj Dilara on his grave
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
What is this to build a house on the sun and then find shade on it
Even if you have to stand on the hearts, then find your feet.

Come out to the cities with the shining dreams
Finding your village again in high buildings
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔

The desire from the heart makes curious
Then he puts the restrictions on etiquette

The words are silent but your writer's tone
Puts Arabs in my surroundings

First he says to look beyond the sky
Then somewhere in the middle he puts the moon

Every accusation that the enemy does not put on me
He puts my throat on friends.

The night gives you a tired day to slap.
Then someone puts a dream in pursuit

Ahmed Salman
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Is it dew or a deception or a fall that you are there
There is a thirsty spectacle in the desert that you are there

I am a misguided poet in one word
There is an unseen stanza that you are there

The door is also connected to my heartbeat
Knocking tells you that you are a stranger

There is a shadow tangled with sunshine that I am
It's an evening that I believe that you are there

Even if I am, it seems like I am not
You don't even exist and it seems you are
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Sometimes you sold the allegiance, sometimes you sell the walls.
My lawyers sold all the arguments of my existence

He burned his sun and sold my lamps
Save the Euphrates and sell my sabils.

Don't give them strange people, even access to the seas now.
Those who first sold your rivers and your lakes
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
What is seen inside the pain is poetry
I have said what I could say, what is left is poetry

The conversation between the hearts has all the words.
Every pause of your words that speaks is poetry

This whole city is open in light, so what should I write
The one given in the hut of the jungle is poetry

What a strange thing is that all the rivers are falling in one sea
A river that is left on the way is poetry
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
On the branch of possibility, some thorn grows, some open the gancha, I said poetry
Whatever happened in Isa's Grazi, I let it happen, I said the lyrics

People shouted, He is the God, only His praise, only His praise.
My God said to my jugular vein, listen to me yours, I said lyrics

When the city was in the humidity of beja, you lived, your courage
I was hit by rules etc. I had to die, I said lyrics

There should be no sorrow, no happiness, and you are also not there, and say the problem
It's not possible, it doesn't happen, but it happened, I said the lyrics

I got two love, I did both, one is real, one is virtual
I am a Muslim, and Salman too, I read the Kalima, I said the lyrics
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
You don't like the courtyard of the house without shade
People go on footpath without mothers.

The bird of my truth kept shaking on the marble.
Lies kept walking on the wall without feet
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
Why doesn't anything look good or bad to me
Even if I am there, why don't I know about it?

Even though your tone is full of truth
But why doesn't it seem connected to your intention

Now he roams in this city with strangers.
Why don't the people of the city feel bad now?
۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
People understood all the sorrows that we had, when we passed on themselves
When the torment of their love suffered, people understood

The trees from whose shade we lifted the travelers.
People will understand if the fruit does not fall on trees next season.

No one understood the philosophy of this young age.
When the dead body came out of his room, the letters came out, people understood

They were dreams of jasmine, so everyone pledged allegiance to the ruler.
People understood when the snake came out of the veil of a jasmine.

Why was he angry on the construction of an old road in the village?
People understood when their children who never returned to the city

(Ahmed Salman)

Marsal :-: Abul Hasan Ali Nadvi

Translated


جواب چھوڑیں