خیال کیا ہے جو الفاظ تک نہ پہنچے سازؔ "جب آن…

خیال کیا ہے جو الفاظ تک نہ پہنچے سازؔ
"جب آنکھ سے ہی نہ ٹپکا تو پھر لہو کیا ہے"
…….
عبدالاحد سازؔ کا یومِ ولادت
16؍اکتوبر 1950

عبدالاحدسازؔ ممبئی کے ایک معروف شاعر ہیں۔ 16؍اکتوبر 1950ء کو ممبئی میں پیدا ہوئے۔ ان کی شاعری مہاراشٹرا اسٹیٹ بورڈ کے نصاب میں داخل ہے۔ "خاموشی بول اٹھی ہے" (1990)، "سرگوشیاں زمانوں کی" (2003) ان کی اہم مطبوعات ہیں۔ ان کی ادبی خدمات کی بنا پر انہیں مہاراشٹرا اسٹیٹ اردو اکادمی ایوارڈ، مغربی بنگال اردو اکادمی ایوارڈ و دیگر انعامات سے نوازا گیا۔
22؍مارچ 2020ء کو عبدالاحد سازؔ، ممبئی میں انتقال کر گئے۔

مقبول شاعر عبدالاحد سازؔ کے یوم ولادت پر منتخب اشعار

کبھی نمایاں کبھی تہہ نشیں بھی رہتے ہیں
یہیں پہ رہتے ہیں ہم اور نہیں بھی رہتے ہیں

مرنے کی پختہ خیالی میں جینے کی خامی رہنے دو
یہ استدلالی ترک کرو بس استفہامی رہنے دو

سوال کا جواب تھا جواب کے سوال میں
گرفت شور سے چھٹے تو خامشی کے جال میں

میری آنکھوں سے گزر کر دل و جاں میں آنا
جسم میں ڈھل کے مری روح رواں میں آنا

آئی ہوا نہ راس جو سایوں کے شہر کی
ہم ذات کی قدیم گپھاؤں میں کھو گئے

دوست احباب سے لینے نہ سہارے جانا
دل جو گھبرائے سمندر کے کنارے جانا

شعر اچھے بھی کہو سچ بھی کہو کم بھی کہو
درد کی دولت نایاب کو رسوا نہ کرو

وہ تو ایسا بھی ہے ویسا بھی ہے کیسا ہے مگر؟
کیا غضب ہے کوئی اس شوخ کے جیسا بھی نہیں

خبر کے موڑ پہ سنگ نشاں تھی بے خبری
ٹھکانے آئے مرے ہوش یا ٹھکانے لگے

مفلسی بھوک کو شہوت سے ملا دیتی ہے
گندمی لمس میں ہے ذائقۂ نان جویں

برا ہو آئینے ترا میں کون ہوں نہ کھل سکا
مجھی کو پیش کر دیا گیا مری مثال میں

یادوں کے نقش گھل گئے تیزاب وقت میں
چہروں کے نام دل کی خلاؤں میں کھو گئے

شاعری طلب اپنی شاعری عطا اس کی
حوصلے سے کم مانگا ظرف سے سوا پایا

سازؔ جب کھلا ہم پر شعر کوئی غالبؔ کا
ہم نے گویا باطن کا اک سراغ سا پایا

میں ایک ساعت بے خود میں چھو گیا تھا جسے
پھر اس کو لفظ تک آتے ہوئے زمانے لگے

اب آ کے قلم کے پہلو میں سو جاتی ہیں بے کیفی سے
مصرعوں کی شوخ حسینائیں سو بار جو روٹھتی منتی تھیں

میں ترے حسن کو رعنائی معنی دے دوں
تو کسی شب مرے اندازِ بیاں میں آنا

شکست وعدہ کی محفل عجیب تھی تیری
مرا نہ ہونا تھا برپا ترے نہ آنے میں

مرے مہ و سال کی کہانی کی دوسری قسط اس طرح ہے
جنوں نے رسوائیاں لکھی تھیں خرد نے تنہائیاں لکھی ہیں

داد و تحسین کی بولی نہیں تفہیم کا نقد
شرط کچھ تو مرے بکنے کی مناسب ٹھہرے

مشابہت کے یہ دھوکے مماثلت کے فریب
مرا تضاد لیے مجھ سا ہو بہو کیا ہے

نیک گزرے مری شب صدق بدن سے تیرے
غم نہیں رابطۂ صبح جو کاذب ٹھہرے

مری رفیق نفس موت تیری عمر دراز
کہ زندگی کی تمنا ہے دل میں افزوں پھر

عبث ہے راز کو پانے کی جستجو کیا ہے
یہ چاک دل ہے اسے حاجت رفو کیا ہے

خرد کی رہ جو چلا میں تو دل نے مجھ سے کہا
عزیز من ''بہ سلامت روی و باز آئی''

کھلے ہیں پھول کی صورت ترے وصال کے دن
ترے جمال کی راتیں ترے خیال کے دن

حسرتِ دید نہیں ذوقِ تماشا بھی نہیں
کاش پتھر ہوں نگاہیں مگر ایسا بھی نہیں

جانے قلم کی آنکھ میں کس کا ظہور تھا
کل رات میرے گیت کے مکھڑے پہ نور تھا

انتخاب : اعجاز زیڈ ایچ

What is the thought that does not reach the words
′′ When it does not drip from the eyes, then what is the blood ′′
…….
Birthday of Abdul Ahd Saz
16 / October 1950

Abdul Ahdasaz is a well-known poet from Mumbai. Born in Mumbai on 16 / October 1950 His poetry enters the curriculum of the Maharashtra State Board. ′′ Silence bol aathi hai ′′ (1990), ′′ Whisper of times (2003) are his important publications. For his literary services he was awarded the Maharashtra State Urdu Academy Award, West Bengal Urdu Academy Award and other prizes.
Abdul Ahd Sazz died on March 22, 2020 in Mumbai.

Selected poems on the birthday of popular poet Abdul Ahd Saz.

Sometimes they are prominent, sometimes they are still down.
We live here, we don't live anymore.

Let there be the fault of living in the firm thought of dying.
Leave this reasoning, just leave the resignation.

The answer to the question was in the question of the answer
When the grip is sixed from the noise, it is in the trap of silence

Pass through my eyes and come into my heart and soul
My soul come in the running body

The wind did not suit the city of shadows
We are lost in the ancient cubes of caste.

Don't take support from friends
When the heart is afraid to go to the shore of the sea

Say good poetry, say truth, say less.
Do not humiliate the rare wealth of pain.

He is like this, how is he, but?
What a fury, no one is like this vibrant

There was a stone on the turn of the news, unaware
The place has come, my senses or the place has started.

Poverty mixes hunger with lust.
Wheat touch has the taste of naan javin

Your mirror is bad, who am I, could not open it
I was presented in my example

The footsteps of memories dissolved in acid time
Names of faces lost in the space of heart

Poetry demands his poetry.
Asked for less than courage, but found it except the capacity.

When the instrument opens a poetry of Ghalib on us
As if we found a clue of the outsider

I touched myself for an hour
Then it took a long time to reach the word

Now they come and sleep beside the pen because of the carelessness
The vivid beauties of the Mosquitoes who used to be angry a hundred times

I will give your beauty a meaningful meaning
You come in my style some night

The gathering of defeat and promise was strange
I did not want to die in your arrival.

The second episode of my month's story is like this
Those who wrote disgrace, wisdom has written loneliness

It is not a bid of appreciation, it is a cash of understanding.
The condition is somewhat suitable for my sale

These deceptions of imitation and deception of similarities.
For my contradiction, you should be like me, what is the daughter-in

May my good night pass with your true body
It's not sorrow, the contact that is in the morning.

My friend, death is your life long.
That I wish for life to grow in my heart again

It is in vain, what is the search to find the secret?
This is a chalk heart, what is the need for it?

When I walk with my mind, my heart said to me
Dear heart, may you be safe and sound.

The face of flowers are blossomed on the day of your meeting.
The nights of your beauty, the days of your thoughts.

I don't wish to see you, I don't have a taste
I wish my eyes were stone but not like this

Don't know whose appearance was in the eye of the pen
Last night there was light on my song mukhra

Selection: Ejaz Z H

Translated


جواب چھوڑیں