اختر امام رضوی کی وفات October 20, 2008 ………..

اختر امام رضوی کی وفات
October 20, 2008
………
جرم ہستی کی سزا کیوں نہیں دیتے مجھ کو
لوگ جینے کی دعا کیوں نہیں دیتے مجھ کو
صرصر خوں کے تصور سے لرزتے کیوں ہو
خاک صحرا ہوں اڑا کیوں نہیں دیتے مجھ کو
کیوں تکلف ہے مرے نام پہ تعزیروں کا
میں برا ہوں تو بھلا کیوں نہیں دیتے مجھ کو
اب تمہارے لیے خود اپنا تماشائی ہوں
دوستو داد وفا کیوں نہیں دیتے مجھ کو
میں مسافر ہی سہی رات کی خاموشی کا
تم سحر ہو تو صدا کیوں نہیں دیتے مجھ کو
جنس بازار کی صورت ہوں جہاں میں اخترؔ
لوگ شیشوں میں سجا کیوں نہیں دیتے مجھ کو

دل وہ پیاسا ہے کہ دریا کا تماشا دیکھے
اور پھر لہر نہ دیکھے کف دریا دیکھے

میں ہر اک حال میں تھا گردش دوراں کا امیں
جس نے دنیا نہیں دیکھی مرا چہرہ دیکھے

اب بھی آتی ہے تری یاد پہ اس کرب کے ساتھ
ٹوٹتی نیند میں جیسے کوئی سپنا دیکھے

رنگ کی آنچ میں جلتا ہوا خوشبو کا بدن
آنکھ اس پھول کی تصویر میں کیا کیا دیکھے

کوئی چوٹی نہیں اب تو مرے قد سے آگے
یہ زمانہ تو ابھی اور بھی اونچا دیکھے

پھر وہی دھند میں لپٹا ہوا پیکر ہوگا
کون بے کار میں اٹھتا ہوا پردہ دیکھے

ایک احساس ندامت سے لرز اٹھتا ہوں
جب رم موج مری وسعت صحرا دیکھے

Death of Akhtar Imam Rizvi
October 20, 2008
………
Why don't you punish me for the crime?
Why don't people pray for me to live
Why are you afraid of the concept of blood?
I am dust of desert, why don't you fly me
Why is there any problem of condolence in my name?
If I am bad then why don't you forget me
Now I am my own spectator for you
Friends, why don't you give me respect and loyalty
I am a traveler of the silence of the night
If you are dawn, why don't you call me?
Where I am like a gender market, Akhtar.
Why don't people decorate me with glasses

The heart is thirsty to see the spectacle of the river
And then don't see the wave, see the cuff

I was in every situation of rotation. Amen.
The one who has not seen the world has seen my face.

I still remember you with this pain.
As if someone sees a dream in a broken sleep

The body of the fragrance burning in the touch of color
What did the eyes see in the picture of this flower

There is no peak now beyond my height
This time has seen even more high.

Then he will be the packer wrapped in fog
Who sees the veil rising in vain

I tremble with a feeling of shame
When I see the desert in my life.

Translated


جواب چھوڑیں