بعد توبہ کے بھی ہے دل میں یہ حسرت باقی دے کے قسمی…

بعد توبہ کے بھی ہے دل میں یہ حسرت باقی
دے کے قسمیں کوئی اک جام پلا دے ہم کو

مرزا محمد ھادی رسوا ۔۔۔۔۔۔۔۔۔۔
آج 21 ، اکتوبر معروف ناول نگار اور ادیب مرزا ھادی رسوا کا یومِ وفات ھے ۔
سال پیدائش : 1857ء
تاریخ وفات : 21، اکتوبر 1931ء
مرزا محمد ہادی رسوا (1857ء تا 21 اکتوبر، 1931ء) ایک اردو شاعر اور فکشن کے مصنف (بنیادی طور پر مذہب، فلسفہ، اور فلکیات کے موضوعات پر) گرفت رکھتے تھےانہیں اردو، فارسی، عربی، عبرانی، انگریزی، لاطینی، اور یونانی زبان میں مہارت تھی۔ ان کا مشہور زمانہ ناول امراؤ جان ادا 1905ء میں شائع ہوا جو ان کا سب سے پہلا ناول مانا جاتا ہے۔ بعد ازاں ایک پاکستانی فلم امراؤ جان ادا (1972)، اور دو بھارتی فلموں، امراو جان (1981) اور امراو جان (2006) کے لئے بنیاد بنا۔ 2003ء میں نشر کئے جانے والے ایک پاکستانی ٹی وی سیریل کی بھی بنیاد یہی ناول تھا۔
مرزا محمد ہادی رسوا کی زندگی کی درست تفصیلات دستیاب نہیں ہیں اور ان کے ہم عصروں کی طرف سے دی گئی معلومات میں تضادات موجود ہیں البتہ رسوا نے خود تذکرہ کیا ہے کہ ان کے آباء و جداد فارس سے ہندوستان میں آئے اور ان کے پردادا سلطنت اودھ کے نواب کی فوج میں ایک ایڈجوٹنٹ تھے۔
دلی چھٹی تھی پہلے اب لکھنؤ بھی چھوڑیں
دو شہر تھے یہ اپنے دونوں تباہ نکلے
…..
دیکھا ہے مجھے اپنی خوشامد میں جو مصروف
اس بت کو یہ دھوکا ہے کہ اسلام یہی ہے
……
لب پہ کچھ بات آئی جاتی ہے
خامشی مسکرائی جاتی ہے
….
کیا کہوں تجھ سے محبت وہ بلا ہے ہمدم
مجھ کو عبرت نہ ہوئی غیر کے مر جانے سے
…..
انہیں کا نام لے لے کر کوئی فرقت میں مرتا ہے
کبھی وہ بھی تو سن لیں گے جو بدنامی سے ڈرتے ہیں
…..
ہے یقیں وہ نہ آئیں گے پھر بھی
کب نگہ سوئے در نہیں ہوتی
….
مرنے کے دن قریب ہیں شاید کہ اے حیات
تجھ سے طبیعت اپنی بہت سیر ہو گئی
….
ہنس کے کہتا ہے مصور سے وہ غارت گر ہوش
جیسی صورت ہے مری ویسی ہی تصویر بھی ہو
….
ہم کو بھی کیا کیا مزے کی داستانیں یاد تھیں
لیکن اب تمہید ذکر درد و ماتم ہو گئیں

دل لگانے کو نہ سمجھو دل لگی
دشمنوں کی جان پر بن جائے گی
…..
ٹلنا تھا میرے پاس سے اے کاہلی تجھے
کمبخت تو تو آ کے یہیں ڈھیر ہو گئی
…..
ہم نشیں دیکھی نحوست داستان ہجر کی
صحبتیں جمنے نہ پائی تھیں کہ برہم ہو گئیں
…..
چند باتیں وہ جو ہم رندوں میں تھیں ضرب المثل
اب سنا مرزا کہ درد اہل عرفاں ہو گئیں
…..
کس قدر معتقد حسن مکافات ہوں میں
دل میں خوش ہوتا ہوں جب رنج سوا ہوتا ہے
….
دبکی ہوئی تھی گربہ صفت خواہش گناہ
چمکارنے سے پھول گئی شعر ہو گئی
…..
بت پرستی میں نہ ہوگا کوئی مجھ سا بدنام
جھینپتا ہوں جو کہیں ذکر خدا ہوتا ہے

Even after repentance, this desire remains in the heart.
I swear someone give me a drink

Mirza Muhammad Hadi is disgraced.
Today 21 October is the death anniversary of renowned novelist and Adeeb Mirza Hadi Raswa.
Year of birth: 1857
Date of death: 21 October 1931
Mirza Mohammad Hadi Raswa (1857 to 21 October, 1931) was an Urdu poet and writer of fiction (mainly on the topics of religion, philosophy, and astronomy). He had a hold of Urdu, Persian, Arabic, He specialized in Hebrew, English, Latin, and Greek. His famous novel Amrao Jan Ada was published in 1905 which is considered to be his debut novel. Later, a Pakistani film Amrao Jan Ada (1972) ), and two Indian films, Amrao Jan (1981) and Amrao Jan (2006). The same novel was also based on a Pakistani TV serial aired in 2003
The accurate details of Mirza Muhammad Hadi's life are not available and there are contradictions in the information given by his colleagues. However, disgrace himself has mentioned that his ancestors came to India from Persia and his ancestors came to the kingdom. Awadh's Nawab was an adult in the army.
It was a hearty holiday earlier, now leave Lucknow too.
There were two cities, both of them were destroyed.
…..
I have seen someone busy in my flattery.
This idol is deceived that this is Islam.
……
Something comes on the lips
Silence is a smile
….
What can I say to you, love is a bad thing, Mdm
I didn't learn from the death of a stranger.
…..
Someone dies in Farqat by taking their name.
Sometimes those who are afraid of scandal will also listen.
…..
I believe they won't come yet
When don't you sleep?
….
The days of death are near, maybe O life
I am very satisfied with you.
….
He laughs and says to the painter, that devastating senses.
My picture should be the same as my face
….
We also remembered the fun stories
But now Tamed has become pain and mourning.

Don't think to fall in love, it's
It will be made on the lives of enemies
…..
You had to move away from me O sloth
The unfortunate person came and got piles here
…..
We have seen the misfortune story of separation.
Companions were not able to stand up but they got destroyed.
…..
Some of the things that we were amongst the people, multiplication
Now I have heard that Mirza's pain has become Ahle Irfan
…..
How faithful I am, beautiful revenge.
I feel happy in my heart when there is no sorrow
….
The desire of sin was dumped.
It blossomed by shining, it became poetry
…..
No one will be infamous like me in idolism
I lean on the remembrance of God.

Translated


جواب چھوڑیں