خود بنا لیتا ہوں میں اپنی اداسی کا سبب ڈھونڈ ہی ل…

خود بنا لیتا ہوں میں اپنی اداسی کا سبب
ڈھونڈ ہی لیتی ہے شاہیںؔ مجھ کو ویرانی مری
……
جاوید شاہین کی وفات
October 23, 2008

اردو کے معروف شاعر، ادیب اور مترجم جاوید شاہین کا اصل نام اختر جاوید تھا اور وہ 28 اکتوبر 1932ء کو امرتسر میں پیدا ہوئے تھے۔ ان کی تصانیف میں شعری مجموعوں زخم مسلسل کی ہری شاخ، صبح سے ملاقات، جاگتا لمحہ، محراب میں آنکھیں، نیکیوں سے خالی شہر، دیر سے نکلنے والا دن اور ہوا کا وعدہ کے علاوہ ان کی خودنوشت سوانح عمری مرے ماہ و سال کے نام شامل ہیں۔ جاوید شاہین 23 اکتوبر 2008ء کو اسلام آباد میں وفات پاگئے اورلاہور میں میانی صاحب کے قبرستان میں آسودہ خاک ہوئے ۔ حکومت پاکستان نے انہیں 14 اگست 2005ء کو صدارتی تمغہ برائے حسن کارکردگی عطا کیا تھا۔
…..
اجنبی بود و باش کے قرب و جوار میں ملا
بچھڑا تو وہ مجھے کسی اور دیار میں ملا
……
ڈوبنے والا تھا دن شام تھی ہونے والی
یوں لگا مری کوئی چیز تھی کھونے والی
…….
حساب دوستاں کرنے ہی سے معلوم یہ ہوگا
خسارے میں ہوں یا اب میں خسارے سے نکل آیا
………
جمع کرتی ہے مجھے رات بہت مشکل سے
صبح کو گھر سے نکلتے ہی بکھرنے کے لیے
………
جدا تھی بام سے دیوار در اکیلا تھا
مکیں تھے خود میں مگن اور گھر اکیلا تھا
……..
کہیں صدائے جرس ہے نہ گرد راہ سفر
ٹھہر گیا ہے کہاں قافلہ تمنا کا
…….
خطا کس کی ہے تم ہی وقت سے باہر رہے شاہیںؔ
تمہیں آواز دینے ایک لمحہ دور تک آیا
……
خود بنا لیتا ہوں میں اپنی اداسی کا سبب
ڈھونڈ ہی لیتی ہے شاہیںؔ مجھ کو ویرانی مری
……
کس طرح بے موج اور خالی روانی سے ہوا
بے خبر دریا کہاں پر اپنے پانی سے ہوا
…….
کچھ زمانے کی روش نے سخت مجھ کو کر دیا
اور کچھ بے درد میں اس کو بھلانے سے ہوا
…….
میں نے دیکھا ہے چمن سے رخصت گل کا سماں
سب سے پہلے رنگ مدھم ایک کونے سے ہوا
…….
مزہ تو جب ہے اداسی کی شام ہو شاہیںؔ
اور اس کے بیچ سے شام طرب نکل آئے
……..
سمجھ رہا ہے زمانہ ریا کے پیچھے ہوں
میں ایک اور طرح سے خدا کے پیچھے ہوں
……….
تھوڑا سا کہیں جمع بھی رکھ درد کا پانی
موسم ہے کوئی خشک سا برسات سے آگے
……..

I make myself the reason for my sadness
The eagle finds me in my loneliness.
……
Death of Javed Shaheen
October 23, 2008

The original name of Urdu's renowned poet, Adeeb and translator Javed Shaheen was Akhtar Javed and he was born in Amritsar on 28 October 1932 In his books, poetry collections of the wound, the green branch of the Kadri, morning meeting, Jagta The moment, the eyes in the arch, the city empty of virtues, the late day and the promise of the wind, their self-end biography of the month and year are included. Javed Shaheen in Islamabad on October 23, 2008 He died and died in the graveyard of Miani Sahib in Lahore. He was awarded the presidential medal of performance on 14 August 2005
…..
Found in the nearby of a stranger.
When he left me, I found him in another house
……
The day and evening was about to drown.
I felt like I had something to lose
…….
This will be known only by making friends.
I'm at loss or now I'm out of loss
………
The night collects me so hard
To scatter as soon as I leave the house in the morning
………
I was separated from the balm, I was alone in the wall.
The residents were happy with themselves and the house was alone
……..
Somewhere there is a sound of jars and no journey around.
Where has the caravan of desire stopped?
…….
Whose fault is it, you are out of time, eagle.
Came a moment to call you
……
I make myself the reason for my sadness
The eagle finds me in my loneliness.
……
How it happened to be free and empty flow
Unaware of where the river has become with its water
…….
Some times have made me tough
And in some pain, it happened by forgetting him
…….
I have seen the season of the garden leaving the garden.
The first color fade from a corner
…….
It's fun when the evening of sadness is eagle
And the evening came out from between it.
……..
The world is thinking that I am behind Rhea.
I'm following God in another way
……….
Gather the water of pain somewhere a little bit
The weather is ahead of a dry rain
……..

Translated


جواب چھوڑیں