خالی ہاتھ شام آئی ہے خالی ہاتھ جائے گی وقت کی پگڈ…

خالی ہاتھ شام آئی ہے خالی ہاتھ جائے گی

وقت کی پگڈنڈی پر دو مختلف براعظموں میں ایک دوسرے سے دو صدیوں کی دوری پر بیٹھے ہائنرش ہائنے اور گلزار، جن کے محبتوں میں دکھ اور ان کا شاعرانہ اظہار حیران کن حد تک مماثلMore ہیں:

صبح جاگتا ہوں اور خود سے پوچھتا ہوں میں:
آج تو آئے گا مرا وہ محبوب دلربا؟
شام کو غم میں ڈوب کے سسکیاں نکلتی ہیں:
آج بھی نہ آیا وہ جس کا انتظار تھا!
یہی تو غم ہے جو رفیقِ شب ہے مستقل
وہ شب جو سوچتے، جاگتے کاٹتا ہوں میں
پھر اس کے بعد نیند، خواب کچھ، رت جگے لیے
اداس، اک نئے دن سے جا لپٹتا ہوں میں

(شاعر: ہائنرش ہائنے؛ جرمن سے اردو ترجمہ: مقبول ملک)

Morgens steh ich auf und frage:
Kommt feins Liebchen heut?
Abends sink ich hin und klage:
Aus blieb sie auch heut.
In der Nacht mit meinem Kummer
Lieg ich schlaflos, wach;
Träumend, wie im halben Schlummer,
Wandle ich bei Tag.

(Heinrich Heine)

خالی ہاتھ شام آئی ہے خالی ہاتھ جائے گی
آج بھی نہ آیا کوئی خالی لوٹ جائے گی
آج بھی نہ آئے آنسو آج بھی نہ بھیگے نینا
آج بھی یہ کوری رینا کوری لوٹ جائے گی
رات کی سیاہی کوئی پائے تو مٹائے نہ
آج نہ مٹائی تو یہ کل بھی لوٹ آئے گی

(گلزار)

Image may contain: one or more people, sky, ocean, twilight, outdoor, water and natureImage may contain: 1 person, closeupImage may contain: one or more people and indoorImage may contain: 1 person, eyeglasses and outdoor
بشکریہ
https://www.facebook.com/groups/1876886402541884/permalink/2939369672960213

جواب چھوڑیں