منشی حیات بخش رسا کا یومِ وفات November 22, 1913 …

منشی حیات بخش رسا کا یومِ وفات
November 22, 1913

نام منشی حیات بخش اور تخلص رساؔ تھا۔ 1872ء میں کاسنہ، ضلع بلند شہر اتر پردیش میں پیدا ہوئے۔ تعلیم سے فارغ ہوکر سرکاری ملازمت کرلی۔ 1885ء میں تحصیل مصطفیٰ آباد، مین پوری میں تعینات تھے۔ اور 1889ء میں شکوہ آباد میں محرّر جوڈیشل کے عہدے پر فائز تھے۔
داغؔ سے تلمذ حاصل تھا۔ ان کا دیوان نہ چھپ سکا۔ مولانا حسرتؔ موہانیؒ نے مختلف جرائد سے ان کا کلام جمع کرکے ایک مختصر مجموعۂ غزلیات مرتب کیا۔
منشی حیات بخش رساؔ 22؍نومبر 1913 کو رامپور میں انتقال کر گئے۔
….
منشی حیات بخش رساؔ کے یوم وفات پر منتخب اشعار

جب سے گم ہوگیا ہے دل اپنا
چیز رکھتا ہوں بھول جاتا ہوں
———-
دل میں کسی کو رکھو دل میں رہو کسی کے
سیکھو ابھی طریقے کُچھ روز دلبری کے

آئے اگر قیامت تو دھجّیاں اُڑا دیں
پھرتے ہیں جستجو میں فتنے تری گلی کے
———–
بلا سے غیر کے در پر کرینگے ہم جبیں سائی
اگر مرضی تری اے کاتب تقدیر ایسی ہے

بوقتِ ذبح قاتل کا بڑھایا دل یہ کہہ کر
کہ تُو قاتل ہے ایسا اور تری شمشیر ایسی ہے
———-
دو قدم چل کے دکھا دو تو قیامت کا مزا
حشر سے پہلے ہی اک محشر بپا ہونے لگے
———-
وعدۂ حشر ہے پھر وہ بھی زمانے بھر سے
کوئی دامن نہ پکڑ لے سرِ محشر دیکھو

اُن کو دشمن سے جو اُلفت ہے پروا نہ کرو
اے رساؔ تم بھی کسی اور پہ مر کر دیکھو
———-
اُس کو جنت بھی عطا ہو تو جہنم سمجھے
جس پہ سایہ ہے تیرے کوچے کی دیواروں کا
———-
اُن کو تو ہم نے چاہا وہ یوں ستا رہے ہیں
اے چرخ کینہ پرور تو کیوں ستا رہا ہے؟

کوچے میں دشمنوں کے ہم اور سجدہ کرتے
نقشِ قدم کسی کا سر کو جُھکا رہا ہے
……
انتخاب : شمیم ریاض

Death anniversary of Munshi Hayat Bakhsh Rasa
November 22, 1913

The name was Munshi Hayat Bakhsh and Takhlis Rasa. Born in 1872 in Kasna, Buland City District Uttar Pradesh. He was resigned from education and appointed in Tehsil Mustafaabad, Main Puri in 1885 and 1889 Muharrar was appointed as judicial in Shukwahabad.
There was a relative from Dagh. His diwan could not hide. Maulana Hasrat Mohani collected his words from different magazines and compiled a short collection of Ghazals.
Munshi Hayat Bakhsh Rasa died on 22 / November 1913 in Rampur.
….
Selected poems on the death anniversary of Munshi Hayat Bakhsh.

Ever since my heart is lost
I keep things and forget them
———-
Keep someone in your heart, stay in someone's heart
Learn the ways of heartbreak for a few days now.

If the doomsday comes, they will blow the blow.
They roam around in search of mischief of your street
———–
We will do it at the doorsteps of strangers.
If it is your will, the fate is like this.

At the time of slaughter, the killer's heart increased by saying this
That you are a killer and your arms are like this
———-
If you walk two steps then you will enjoy the doomsday.
Before the Day of Resurrection, a doomsday started to happen.
———-
The promise of the Day of Resurrection is then that too from the whole world
Let no one hold your feet, look at the Day of Judgment.

Don't care what they love with the enemy
O ' Rasa, you also die on someone else and see
———-
If he is given heaven, he will be considered as hell.
On which there is shadow of the walls of your street
———-
We loved them, they are torturing us like this.
O ' Charukh, why are you torturing me?

We bow down to the enemies in the street.
The footsteps are bowing someone's head
……
Selection: Shamim Riaz

Translated


جواب چھوڑیں