سب کو حروف التجا ہم نذر کر چکے دشمن تو موم ہو گئے…

سب کو حروف التجا ہم نذر کر چکے
دشمن تو موم ہو گئے پتھر وہی رہا

بلراج کوملؔ کا یومِ وفات
November 25 2013

اردو شعر و ادب کی معروف شخصیت ، ادیب ، شاعر ، نقاد اور افسانہ نگار بلراج_کوملؔ 25؍ستمبر 1928ء کو سیالکوٹ (پاکستان) میں پیدا ہوئے۔ تقسیم وطن کے بعد انہوں نے دہلی کو اپنی رہائش گاہ بنایا اور اپنے علم ، محنت ، سچی لگن ، انکساری اور نرم گفتاری کے باعث لوگوں کے دلوں میں اپنی جگہ بنائی۔
بلراج کومل کا ادبی سفر تقسیم وطن کے ناگفتہ بہ حالات میں شروع ہوا۔ اردو ادب کے تئیں ان کے سنجیدہ رویہ کی وجہ سے ہی ان کا شمار صف اول کے ادیبوں میں ہوتا تھا۔ بلراج کومل کو ہندوستان کی سب سے اعلیٰ اور موقر ادبی تنظیم ساہتیہ اکادمی نے ان کے شعری مجموعے "پرندوں بھرا آسمان" کو 1985 میں ایوارڈ سے نوازا تھا۔ 2011ء میں انہیں حکومت ہند کی جانب سے پدم شری کا خطاب بھی ملا تھا۔
ان کی تصنیفات میں میری نظمیں ، رشتۂ دل ، اگلا ورق ، آنکھیں اور پاؤں (کہانیوں کا مجموعہ) اور ادب کی تلاش (تنقید) شامل ہیں۔
وہ ایک معروف مترجم بھی تھے۔ انہوں نے انگریزی ، ہندی ، اردو اور پنجابی کی تخلیقات ایک دوسری زبانوں میں منتقل کیے ہیں۔
بلراج کومل 25؍نومبر 2013ء کو مختصر علالت کے بعد انتقال کر گئے۔
…..
بلراج کوملؔ کے یوم وفات پر منتخب غزلیں
..
دل کا معاملہ وہی محشر وہی رہا
اب کے برس بھی رات کا منتظر وہی رہا

نومید ہو گئے تو سبھی دوست اٹھ گئے
وہ صید انتقام تھا در پر وہی رہا

سارا ہجوم پا پیادہ چوں کہ درمیاں
صرف ایک ہی سوار تھا رہبر وہی رہا

سب لوگ سچ ہے با ہنر تھے پھر بھی کامیاب
یہ کیسا اتفاق تھا اکثر وہی رہا

یہ ارتقا کا فیض تھا یا محض حادثہ
مینڈک تو فیل پا ہوئے اژدر وہی رہا

سب کو حروف التجا ہم نذر کر چکے
دشمن تو موم ہو گئے پتھر وہی رہا
…..
کھویا کھویا اداس سا ہوگا
تم سے وہ شخص جب ملا ہوگا

قرب کا ذکر جب چلا ہوگا
درمیاں کوئی فاصلہ ہوگا

روح سے روح ہو چکی بد ظن
جسم سے جسم کب جدا ہوگا

پھر بلایا ہے اس نے خط لکھ کر
سامنے کوئی مسئلہ ہوگا

ہر حماقت پہ سوچتے تھے ہم
عقل کا اور مرحلہ ہوگا

گھر میں سب لوگ سو رہے ہوں گے
پھول آنگن میں جل چکا ہوگا

کل کی باتیں کرو گے جب لوگو
خوف سا دل میں رونما ہوگا
…..
انتخاب : اعجاز زیڈ ایچ

We have offered a letter request to everyone.
Enemies became wax, the stone remained the same.

Death anniversary of Balraj Komal
November 25 2013

A renowned personality of Urdu poetry and literature, Adeeb, poet, critic and fiction writer Balraj _ Komal was born on 25 / September 1928 in Sialkot (Pakistan). After partition of homeland, he made Delhi his residence and Made a place in the hearts of people with your knowledge, hard work, true passion, humility and soft speech.
Bilraj Komal's literary journey started in the unnecessary circumstances of the homeland distribution. He was counted among the first row of the first row due to his serious attitude towards Urdu literature. Balraj Komal is the highest and most positioned literary organization in India. Sahtya Academy awarded her poetry collection ′′ Birds full sky ′′ in 1985 She also received Padma Shri's address from the Government of India in 2011
His writings include my poems, the relationship of heart, the next cover, eyes and feet (collection of stories) and the search of literature (criticism).
He was also a well known translator. He has transferred the creations of English, Hindi, Urdu and Punjabi to another languages.
Balraj Komal died on 25 / November 2013 after a brief illness.
…..
Selected ghazals on the death anniversary of Balraj Komal
..
The matter of heart remained the same on the Day of Judgment
This year also waited for the night.

All the friends got up when they got Nomed
He was just revenge, he remained the same at the door.

The whole crowd is on foot between the battle
There was only one rider, the leader remained the same.

All the people are true, they were skilled but still successful.
What kind of coincidence was this, often it remained

Was this a gift of evolution or just an accident
The frogs failed, the dragon remained the same.

We have offered a letter request to everyone.
Enemies became wax, the stone remained the same.
…..
Lost will be sad
When you met that person

When the approach will be mentioned
There will be a distance between

The soul has become bad from the soul
When will the body be separated from the body?

Again he has called me by writing a letter
There will be a problem in front

We used to think about every stupidity
There will be another phase of wisdom

Everyone in the house must be sleeping
The flower must have burnt in the courtyard

When people will talk about tomorrow
Fear will happen in the heart
…..
Selection: Ejaz Z H

Translated


جواب چھوڑیں