اندھیرا مانگنے آیا تھا روشنی کی بھیک ہم اپنا گھر …

اندھیرا مانگنے آیا تھا روشنی کی بھیک
ہم اپنا گھر نہ جلاتے تو اور کیا کرتے
..
نذیرؔ بنارسی کا یومِ پیدائش
November 25, 1909

*نذیرؔ بنارسی* کا شمار نظم اور غزل کے معروف ترین شاعروں میں ہوتا ہے۔ وہ *٢٥؍نومبر ١٩٠٩ء* کو *بنارس* میں پیدا ہوئے ۔ ان کے والد بنارس کے مشہور طبیب تھے ۔ نذیر بھی طبابت کے اس آبائی پیشے سے وابستہ ہوگئے۔ شاعری میں نذیر کا کمال یہ ہے کہ انہوں نے اپنی نظموں کے موضوعات اپنے آس پاس بکھری ہوئی زندگی کے حقیقی رنگوں سے چنے۔ انہوں نے اپنے وقت کی اہم سیاسی، سماجی ،علمی اور ادبی شخصیات پر طویل طویل نظمیں بھی لکھیں۔ نذیر کے شعری مجموعے *’گنگ وجمن‘ راشٹر کی امانت راشٹر کے حوالے‘ ’جواہر سے لال تک‘ ’ غلامی سے آزادی تک‘ اور ’کتاب غزل‘* کے نام سے شائع ہوئے۔ نذیر کی شاعری ایک طور سے ان کے عہد کی سیاسی ، سماجی اور تہذیبی اتھل پتھل کا تخلیقی دستاویز ہے۔ *٢٣؍مارچ ١٩٩٦ء* کو *بنارس* میں انتقال ہوا۔
…..
معروف شاعر نذیرؔ بنارسی کے یومِ وفات پر منتخب اشعار

آس ہی سے دل میں پیدا زندگی ہونے لگی
شمع جلنے بھی نہ پائی روشنی ہونے لگی

سامانِ سفر پیارے کیا ساتھ نہ لوں کیا لوں
اک شب کا مسافر ہوں کیا چھوڑنا کیا رکھنا

اندھیرا مانگنے آیا تھا روشنی کی بھیک
ہم اپنا گھر نہ جلاتے تو اور کیا کرتے

*ایک دیوانے کو جو آئے ہیں سمجھانے کئی*
*پہلے میں دیوانہ تھا اور اب ہیں دیوانے کئی*

بد گمانی کو بڑھا کر تم نے یہ کیا کر دیا
خود بھی تنہا ہو گئے مجھ کو بھی تنہا کر دیا

خود مل گئے اس بت سے مجھے کر کے نصیحت
واعظ بھی خدا ہی کے سنوارے نکل آئے

جی میں آتا ہے کہ دیں پردے سے پردے کا جواب
ہم سے وہ پردہ کریں دنیا سے ہم پردا کریں

*وہ گھر آئے تھے نذیرؔ ایسے میں کچھ کہنا نہ تھا*
*شکر کا موقع تھا پیارے تو نے شکوا کر دیا*

دوسروں سے کب تلک ہم پیاس کا شکوہ کریں
لاؤ تیشہ ایک دریا دوسرا پیدا کریں

*عمر بھر کی بات بگڑی اک ذرا سی بات میں*
*ایک لمحہ زندگی بھر کی کمائی کھا گیا*

وہ آئنہ ہوں جو کبھی کمرے میں سجا تھا
اب گر کے جو ٹوٹا ہوں تو رستے میں پڑا ہوں

*یہ عنایتیں غضب کی یہ بلا کی مہربانی*
*مری خیریت بھی پوچھی کسی اور کی زبانی*

*ہوئے مجھ سے جس گھڑی تم جدا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو*
*مری ہر نظر تھی اک التجا تمہیں یاد ہو کہ نہ یاد ہو*

اور تو کچھ نہ ہوا پی کے بہک جانے سے
بات مے خانے کی باہر گئی مے خانے سے

تمہیں نے دل کے اندھیرے کو دی ضیائے امید
تمہیں غریب کے گھر کا دیا بجھا کے چلے

*ہمیں تو اس لب نازک کو دینی تھی زحمت*
*اگر نہ بات بڑھاتے تو اور کیا کرتے*

*شاید کہ نذیرؔ اٹھ چکا اب دل کا جنازہ*
*اب سانس کے پردوں میں وہ کہرام نہیں ہے*
…..
*انتخاب : اعجاز زیڈ ایچ*

Came to beg for darkness, begging for light.
What else would we have done if we did not burn our house
..
Birthday of Nazir Banarasi
November 25, 1909

* Nazir Banarasi * is counted among the most famous poets of poem and ghazal. He was born in * Banaras * on * 25 / November 1909 His father was a famous doctor of Banaras. Nazir is also of Tababababab. Connected to this ancestral profession. Nazir's wonders in poetry is that he chose the topics of his poems from the true colors of life scattered around him. He longed on important political, social, academic and literary personalities of his time. Also write poems. Nazir's poetry collections * ' Gang Wajman ' Rashter's Amanat Rashter was published in the name of ' Jawahar to Lal ' from Slavery to Freedom ' and ' Book Ghazal ' Nazir's poetry in one way. His covenant is a creative document of political, social and cultural athlete. He died in * Banaras * on * 23 / March 1996 *
…..
Selected poems on the death anniversary of famous poet Nazir Banarasi

Life started to be born in heart with hope
The candle could not even burn, but the light started coming.

What should I take with me for the journey, what should I take
I am a night traveler, what to leave, what to keep

Came to beg for darkness, begging for light.
What else would we have done if we did not burn our house

* A crazy person who has come to explain many *
* Earlier I was crazy and now many are crazy *

What have you done by increasing your misunderstanding?
I have become lonely myself, I have also left alone.

I got advice from this idol myself.
The preacher also came out to be adorned by God.

Yes, I come to answer the veil from the veil.
They should cover us and cover us from the world.

* He came home Nazir, I didn't have to say anything in such a way *
* It was an opportunity to thank you dear, you complained *

Till when should we complain about thirst to others
Bring Tisha, one river and create another

* The matter of whole life got spoiled in a little bit *
* A moment ate up the earnings of a lifetime *

I am the mirror that was ever decorated in the room
Now that I am broken, I am on the way.

* These blessings of wrath, this is the mercy of the blasphemy *
* Asked about my well-being in someone else's words *

* The moment you separated from me, whether you remember or not *
* Every sight of mine was a request whether you remember or not *

And you didn't do anything after drinking and going astray
The talk went out of the box.

You have given the darkness of my heart a waste of hope
Let's extinguish the lamp of the poor's house

* We had to give trouble to this delicate lips *
* What else would you do if you didn't increase the talk *

* Perhaps the Nazir has risen now the funeral of the heart *
* Now the curtains of breath do not have that ashram *
…..
* Selection: Ejaz Z H *

Translated


جواب چھوڑیں