حرف تازہ نئی خوشبو میں لکھا چاہتا ہے باب اک اور …

حرف تازہ نئی خوشبو میں لکھا چاہتا ہے
باب اک اور محبت کا کھلا چاہتا ہے

ایک لمحے کی توجہ نہیں حاصل اس کی
اور یہ دل کہ اسے حد سے سوا چاہتا ہے

اک حجاب تہہ اقرار ہے مانع ورنہ
گل کو معلوم ہے کیا دست صبا چاہتا ہے

ریت ہی ریت ہے اس دل میں مسافر میرے
اور یہ صحرا ترا نقش کف پا چاہتا ہے

یہی خاموشی کئی رنگ میں ظاہر ہوگی
اور کچھ روز کہ وہ شوخ کھلا چاہتا ہے

رات کو مان لیا دل نے مقدر لیکن
رات کے ہاتھ پہ اب کوئی دیا چاہتا ہے

تیرے پیمانے میں گردش نہیں باقی ساقی
اور تری بزم سے اب کوئی اٹھا چاہتا ہے
پروین شاکر
انتخاب جناب حکیم خلیق الرحمٰن

The letter wants to be written in a fresh fragrance
Bob wants another love open

Not getting a moment's attention
And this heart wants it beyond limits

A hijab is a confession, otherwise
Gul knows what the hand of Saba wants

Sand is the sand in my heart, my traveler
And this desert wants your footsteps.

This silence will appear in many colors
And a few days he wants to open the vibrant

My heart accepted my fate at night but
Now someone wants a lamp on the hand of the night

There is no rotation in your scale, bartender
And now someone wants to wake up from your meeting
Parveen Shakir
Selection of Mr. Hakim Khaliq-ur-Rehman

Translated


جواب چھوڑیں