مصنف، شاعر عبدالقوی شکور المعروف تشنہ بریلوی کا یو…

مصنف، شاعر عبدالقوی شکور المعروف تشنہ بریلوی کا یومِ وفات
December 07, 2015

میخانۂ اردو بہت آباد ہے تشنہؔ
آتے ہیں مگر یاد مجھے جوشؔ و جگرؔ آج
…….
بس یہی اک کام باقی تھا جو کرنا ہے مجھے
میں محبت بو رہا ہوں نفرتوں کے درمیاں
………
قریب آ نہ سکا میں ترے مگر خوش ہوں
کہ میرا ذکر تری داستاں سے دور نہیں

راستے اجنبی منزلیں اجنبی
حاضرین اجنبی محفلیں اجنبی
زندگی کچھ نہیں زندگی اجنبی
اور پھر میرے دل موت بھی اجنبی

یار بھی اجنبی اور اغیار بھی
ریڈیو ٹی وی سارے یہ اخبار بھی
ہے زمیں اجنبی آسماں اجنبی
اور تو اور کون و مکاں اجنبی

سامنے آئینے کے جو میں آ گیا
آئینے نے کہا کون ہے تو بتا
کچھ تو اپنا تعارف بھی مجھ سے کرا
میں ہنسا اور ہنس کے کہنے لگا

میں بھی ہوں اجنبی اور تو اجنبی
شکل میری ترے روبرو اجنبی

میں بھی حیران ہوں تو بھی حیران ہے
شہر سنسان ہے دل بھی ویران ہے
ڈھیر مٹی کا بس اپنی پہچان ہے

سایۂ زلف برہم میں لے چل مجھے
ورنہ مے خانۂ غم میں لے چل مجھے

قطرۂ اشک یا قطرۂ مے پیوں
کیوں نہ سرمایۂ زیست ان کو کہوں

دوستی دشمنی گفتگو اجنبی
آج سب کچھ بجز ہاؤ ہو اجنبی

Death anniversary of author, poet Abdul Qavi Shakur alias Tashna Barelvi
December 07, 2015

Me Khan, Urdu is very inhabited.
But I remember my passion and liver today.
…….
The only thing left was that I have to do
I'm sowing love in the midst of hatred
………
I could not come close to you but I am happy
That my mention is not far from your story

Strange paths, stranger destinations
Attendees stranger gatherings stranger
Life is nothing but life is stranger
And then my heart and death is also a stranger

Friend is a stranger and a stranger too.
Radio TV, all this newspaper too
The earth is strange, the sky is stranger.
And you and who else are strangers

When I came in front of the mirror
The mirror said, ′′ Tell me who is there
Please introduce yourself to me.
I laughed and laughed and said

I am also a stranger and you are a stranger
My face is a stranger in front of you

Even if I am surprised, I am surprised.
The city is deserted, the heart is also deserted.
Pile of soil is just its own identity

O my hair, take me to the disturbance
Otherwise, take me to the house of grief.

Drink tears in Qatar or Qatar
Why shouldn't I tell them the life of life?

Friendship enmity talk stranger
Today everything is except a stranger

Translated


جواب چھوڑیں