ناصر کاظمی کے 50اشعار۔۔۔ انتخاب (حسنین حیدر) ریختہ…

ناصر کاظمی کے 50اشعار۔۔۔ انتخاب (حسنین حیدر) ریختہ


پرانی صحبتیں یاد آ رہی ہیں
چراغوں کا دھواں دیکھا نہ جائے

وہ درد ہی نہ رہا ورنہ اے متاعِ حیات
مجھے گماں بھی نہ تھا میں تجھے بھلا دوں گا

خمِ ہر لفظ ہے گلِ معنی
اہل تحریر کا ہنر دیکھو

دروازے سر پھوڑ رہے ہیں
کون اس گھر کو چھوڑ گیا ہے

دیوانگئِ شوق کو یہ دھن ہے کہ ان دِنوں
گھر بھی ہو اور بے درودیوارسا بھی ہو

یہ آج راہ بھول کے آئے کدھر سے آپ
یہ خواب میں نے رات ہی دیکھا تھا خواب میں

فرصت ہے اور شام بھی گہری ہے کس قدر
اس وقت کچھ کلام نہیں آپ سے مجھے

میں ہوں ایک شاعرِ بے نوا مجھے کون چاہے مرے سوا
میں امیرِ شام و عجم نہیں میں کبیر کوفہ و رَے نہیں

اس بستی سے آتی ہیں
آوازیں زنجیروں کی
10۔
ناصر سے کہے کون کہ اللہ کے بندے
باقی ہے ابھی رات ذرا آنکھ جھپک لے
11۔
ہم بھلا چپ رہنے والے تھے کہیں
ہاں مگر حالات ایسے ہو گئے
12۔
یہاں جنگل تھے آبادی سے پہلے
سنا ہے میں نے لوگوں‌کی زبانی
13۔
جوترا محرم ملا اس کو نہ تھی اپنی خبر
شہر میں تیرا پتہ کس کس سے پوچھا ہے نہ پوچھ
14۔
آج دیکھا ہے تجھ کو دیر کے بعد
آج کا دن گزر نہ جائے کہیں
15
جب تیز ہوا چلتی ہے بستی میں سرِ شام
برساتی ہیں اطراف سے پتھر تیری یادیں
16۔
دل ترے بعد سو گیا ورنہ
شور تھا اس مکاں میں کیا کیا کچھ
17۔
حاصلِ عشق ترا حُسنِ پشیماں ہی سہی
میری حسرت تری صورت سے نمایاں ہی سہی
18۔
بستی والوں سے چھپ کر
رو لیتے ہیں پچھلی رات
19۔
کتنے بیتے دنوں کی یاد آئی
آج تیری کمی میں کیا کچھ تھا
20۔
یہ حقیقت ہے کہ احباب کو ہم
یاد ہی کب تھے جو اب یاد نہیں
21۔
پھر آج ترے دروازے پر بڑی دیر کے بعد گیا تھا مگر
اِک بات اچانک یاد آئی ۔۔۔ میں باہر ہی سے لوٹ آیا
22۔
لبِ جُو چھاؤں میں درختوں کی
وہ ملاقات تھی عجب کوئی
23۔
راز نیازِ عشق میں کیا دخل ہے ترا
ہٹ فکرِ روزگار ۔۔ غزل کہہ رہا ہوں میں
24۔
گزر ہی جائے گی اے دوست تیرے ہجر کی رات
کہ تجھ سے بڑھ کے تیرا درد ہے مرا ہم ساز
25۔
تیرا بھولا ہوا پیمانِ وفا
مر رہیں گے اگر اب یاد آیا
26۔
خدا وہ دن بھی دکھاۓ تجھے کہ میری طرح
مری وفا پہ بھروسا نہ کر سکے تو بھی
27۔
تو جو ناگاہ سامنے آیا
رکھ لیے میں ہاتھ آنکھوں پر
28۔
کبھی فرصت ہو تو اے صبحِ جمال
شب گزیدوں کی دعا غور سے سُن
29۔
دل میں اک عمر جس نے شور کیا
وہ بہت کم رہا ہے آنکھوں میں
30۔
صبح نکلے تھے فکرِ دنیا میں
خانہ برباد ۔۔ دن ڈھلے آئے
31۔
کبھی زلفوں کی گھٹا نے گھیرا
کبھی آنکھوں کی چمک یاد آئی
32۔
اب تو جھونکے سے لرز اُٹھتا ہوں
نشہء خوابِ گراں تھا پہلے
33۔
یوں ترے حسن کی تصویر غزل میں آئے
جیسے بلقیس ۔۔۔ سلیماں کے محل میں آئے
34۔
کیوں نہ کھینچے دلوں کو ویرانہ
اُس کی صورت بھی اپنے گھر کی سی ہے
35۔
سوچتا ہوں کہ سنگِ منزل نے
چاندنی کا لباس کیوں پہنا
36۔
اب تو دنیا بھی وہ دنیا نہ رہی
اب ترا دھیان بھی اُتنا نہ رہا
37۔
ناصر یہ شعر کیوں نہ ہوں موتی سے آبدار
اس فن میں کی ہے میں نے بہت دیر جانکنی
38۔
اب دل میں کیا رہا ہے، تری یاد ہو تو ہو
یہ گھر اسی چراغ سے آباد ہو تو ہو
39۔
گھُٹ کے مر جاؤں گا اے صبحِ جمال
میں اندھیرے میں ہوں، آواز نہ دے
40۔
اسیرو کچھ نہ ہوگا شور و شر سے
لپٹ کر سو رہو زنجیرِ در سے
41۔
پہلی بارش بھیجنے والے
میں ترے درشن کا پیاسا تھا
42۔
یہ کون لوگ ہیں مرے ادھر اُدھر
وہ دوستی نبھانے والے کیاہوئے
43۔
میری ساری عمر میں
ایک ہی کمی ہے تو
44۔
غمِ فراق میں‌کچھ دیر رو ہی لینے دو
بخار کچھ تو دلِ بے قرار کا نکلے
45۔
رنگ پیلا ہے تیرا کیوں ناصر
تجھے کیا رنج کھائے جاتا ہے
46۔
بھلا ہوا کہ ہمیں یوں بھی کوئی کام نہ تھا
جو ہاتھ ٹوٹ گئے ٹوٹنے کے قابل تھے
47۔
سبز کھیتیوں پہ پھر نکھار آگیا
لے کے زرد پیرہن بسنت آگئی
48۔
میں تو ہلکان ہو گیا ناصر
مدتِ ہجر کتنی پھیل گئی
49۔
ہر شے پکارتی ہے پسِ پردہء سکوت
لیکن کسے سناؤں کوئی ہمنوا بھی ہو
50۔
یہ رنگِ خوں ہے گلوں پر نکھار اگر ہے بھی
حنائے پائے خزاں ہے بہار اگر ہے بھی
۔۔۔۔۔

50 poems of Nasir Kazmi Election (Hasnain Haider) poured

1-1
Missing old companions
The smoke of lamps should not be seen
2-2
That pain is no more otherwise o life of life
I didn't even think I would forget you
3-3
Every word is submissive, it's meaningful.
Look at the skill of the people of writing.
4-4
The doors are crushing their heads
Who has left this house
5-5
The madness of passion has this tune that these days
Be at home and be like a doorstep
6-6
Where did you come from today after forgetting the way?
I had seen this dream only night in my dream
7-7
There is time and the evening is deep, how much
I don't have anything to talk to you at this time
8-8
I am a poet without any reason who wants me except me
I am not the leader of Syria and Ajam, I am not Kabir Kufa and Rae
9-9
They come from this town
Voices of chains
10-10
Tell Nasir who is the servant of Allah
The night is still left, just blink your eyes
11-11
We were going to keep quiet somewhere
Yes, but the situation has become like this
12-12
The forests were here before the population.
I have heard from people
13-13
Jutra Muharram found, he did not know about himself.
Don't ask whom you have asked for your address in the city
14-14
Today I have seen you after a long time.
May today's day pass
15
When the strong wind blows in the town in the evening
Your memories rain stones from the surroundings.
16-16
My heart slept after you otherwise
There was a noise in this house, what did you do?
17-17
The gain of love is your beauty of regret.
My desire is to be better than your face.
18-18
Hiding from the people of the town
Let's cry last night
19-19
How many days did you remember?
What was there in your absence today
20-20
This is the fact that we are friends
When did you remember that now you don't remember
21-21
Again today I went to your door after a long time but
I suddenly remembered one thing I came back from outside
22-22
The lips of trees in the shade
That meeting was strange
23-23
What is your interference in the secret of love?
I'm saying a poem for my employment.
24-24
O friend, the night of your separation will pass
That your pain is more than you, my companion.
25-25
Your forgotten promise of loyalty
We will die if we remember now.
26-26
May God show you that day like me
Even if you could not trust my loyalty
27-27
So the sight that came in front
I put my hand on my eyes
28-28
If you ever have time, O morning of beauty
Listen carefully to the prayers of the past night
29-29
An age in the heart that made noise
He has been very little in the eyes
30-30
We came out in the morning to worry about the world.
The house is ruined. The days have come.
31-31
Sometimes the clouds of hair surrounded me
Did you ever remember the glow of eyes
32-32
Now I tremble with a blow
The intoxication was a heavy dream earlier
33-33
This is how the picture of your beauty came in the poem.
Like Bilquis came to the palace of Solomon
34-34
Why don't you drag the hearts of deserted
His face is also like his own house
35-35
I think that the stone of destination has
Why wear moonlight dress
36-36
Now the world is not the same world
Now your attention is not that much
37-37
Nasir, why shouldn't this poetry be filled with pearls?
I have known this art for a long time.
38-38
What is happening in my heart now, if I remember you then
If this house is inhabited by the same lamp then it should be
39-39
I will sink and die in the morning of beauty
I'm in the dark, don't call me
40-40
Captains, nothing will happen with noise and evil.
Hug and sleep from the chain of door
41-41
First rain senders
I was thirsty for your darshan
42-42
Who are these people here and there
What happened to those who maintain friendship?
43-43
In my whole life
If there is only one lack
44-44
Let me cry for a while in the grief of separation
Fever turned out to be some restless heart.
45-45
Your color is yellow, why Nasir
What pains do you get
46-46
It's good that we didn't have any work like this
The hands that were broken were worth breaking
47-47
The green fields have been purged again.
Basant has arrived with the yellow cloth.
48-48
I have become a slam, Nasir
How much has the period of separation spread?
49-49
Everything calls behind the veil of silence.
But whom should I tell if there is a companion too
50-50
This is the color of blood, even if it is purge on the throats.
Even if it is spring, it is autumn
۔۔۔۔۔

Translated


جواب چھوڑیں