میرے بعد اور کوئی مجھ سا نہ آیا ہو گا اُس کے دروا…

میرے بعد اور کوئی مجھ سا نہ آیا ہو گا
اُس کے دروازے پہ اب تک مرا سایہ ہو گا

اُس نے بھرپور نظر جس پہ بھی ڈالی ہو گی
چاند نے اُس کو کلیجے سے لگایا ہو گا

کس طرح قتل کیا ہو گا میری یادوں کو
کتنی مشکل سے مجھے اُس نے بُھلایا ہو گا

جب چلی ہو گی کہیں بات کسی شاعر کی
اُس کے ہونٹوں پہ مرا نام تو آیا ہو گا

اُس کی پلکوں کا تبسّم یہ پتہ دیتا ہے
اُس نے آنکھوں میں کوئی خواب سجایا ہو گا

زندگی اُس کی سلگتا ہوا صحرا ہو گی
جو تری آنکھوں پہ ایمان نہ لایا ہو گا

تم نے قیصرؔ مرے احساس کے ویرانے میں
میرے خوابوں کو تڑپتا ہوا پایا ہو گا

(قیصرؔ صدّیقی)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

No one like me would have come after me
His door will still be my shadow

He must have put a full eye on anyone.
The moon must have touched her heart

How my memories would have been killed
How hard he must have forgotten me

When the talk of a poet will be gone somewhere
My name must have come on her lips

The smile of her eyelashes gives this address
He must have decorated a dream in his eyes

Life will be his burning desert
Who would not have believed in your eyes

Qaiser, you are in the desert of my feelings.
You must have found my dreams in trouble

(Qaisar Sadiqi)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated


جواب چھوڑیں