شعورِ زیست سہی اعتبار کرنا بھی عجب تماشا ہے لیل و…

شعورِ زیست سہی اعتبار کرنا بھی
عجب تماشا ہے لیل و نہار کرنا بھی

حدیثِ غم کی طوالت گراں سہی لیکن
کسی کے بس میں نہیں اختصار کرنا بھی

بنا کے کاغذی گل لوگ یہ سمجھتے ہیں
کہ اک ہنر ہے خزاں کو بہار کرنا بھی

اب اس نظر سے تری راہ دیکھتا ہوں میں
ترا کرم ہے ترا انتظار کرنا بھی

گزارنے کو تو ہم نے برس گزار دئے
بڑا عذاب ہے گھڑیاں شمار کرنا بھی

خلوص و مہر کی کہنہ روایتوں پہ نہ جا
قدیم رسم ہے دھوکے سے وار کرنا بھی

اب اس کے وعدۂ فردا کا ذکر کیا کرنا
مجھے پسند نہیں انحصار کرنا بھی

ہمیں نے شوقِ شہادت کی ابتدا کی تھی
ہمیں پہ ختم ہوا جاں نثار کرنا بھی

جو رشک کرنا ہے تم کو تو رشک مجھ سے کرو
کہ میرا کام ہے لوگوں سے پیار کرنا بھی

(رشک خلیلی)

المرسل :-: ابوالحسن علی (ندوی)

Even if it is the consciousness of life, it is to trust
It's a strange spectacle to do night and day

The length of the hadith of grief is heavy but
It is not in anyone's control to recap.

People think that after making paper
That's a skill to make autumn spring too

Now I see your way with this glance
It's your grace to wait for you too

We have spent years to spend
Counting the clocks is a great punishment.

Don't go on traditions of sincerity and mercy.
It is an ancient ritual to attack with deception.

Now mention his promise of Farda.
I don't like to depend too

We started the passion of martyrdom.
We have ended up sacrificing our lives

If you want to be jealous, be jealous of me.
That's my job to love people too

(Jealous Khalili)

Marsal :-: Abul Hasan Ali (Nadvi)

Translated

جواب چھوڑیں